.

اسرائیلی آئل ٹینکرپر حملے میں ایرانی ساختہ ڈرون استعمال کیے گئے: واشنگٹن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی سینٹرل کمانڈ نے جمعہ کو ایک بیان میں اعلان کیا ہے کہ 29 مارچ کو اسرائیلی آئل ٹینکر "مرسر اسٹریٹ" پر حملے کے لیے استعمال ہونے والے ڈرون ’ایرانی‘ ساختہ تھے۔

امریکی حکام نے تصدیق کی کہ طیارہ بردار جہاز یو ایس ایس رونالڈ ریگن کے دھماکہ خیز مواد میں مہارت رکھنے والی ٹیم نے شواہد کی جانچ کی اور عملے کے زندہ بچ جانے والے افراد کا انٹرویو لیا۔

ٹیم نے انکشاف کیا کہ 29 جولائی کی شام ٹینکر کو دو ناکام ڈرون حملوں سے نشانہ بنایا گیا۔ عملے نے اس حملے کے بارے میں پریشانی میں کالوں کے ذریعے اطلاع دی۔

تفتیش کاروں کو کم از کم ایک ڈرون کی چھوٹی باقیات ملی ہیں جو عملے نے سمندر سے برآمد کی ہیں۔

ٹیم نے دیکھا کہ ٹینکر کو نمایاں نقصان 30 جولائی کو تیسرے ڈرون حملے کے نتیجے میں ہوا۔

ایرانی اور برطانوی کی ہلاکت

فوجی گریڈ دھماکہ خیز مواد سے لدے اس ڈرون سے دو افراد ہلاک ہوئے۔ جہاز کا کپتان ایک رومانیہ کے شہری اور ایک برطانوی شہری کو ہلاک کیا جو سیکورٹی یونٹ کا حصہ تھا۔

متوازی طور پر ڈرون کے اثرات کے بعد دھماکے نے پائلٹوں کے کیبن کے بالائی حصے میں تقریبا 6 فٹ قطر کا سوراخ کر دیا اور اندرونی حصے کو شدید نقصان پہنچایا۔

کیمیائی ٹیسٹوں میں ایک نائٹریٹ پر مبنی دھماکہ خیز مواد دکھایا گیا جس کی شناخت RDX کے طور پر کی گئی، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ ڈرون کو تباہی کے لیے تیار کیا گیا تھا۔

اس کے علاوہ دھماکہ خیز مواد کے ماہرین اس تیسرے ڈرون کے کئی ٹکڑوں کو بازیاب کرانے میں کامیاب رہے۔ ان میں عمودی سٹیبلائزر (ونگ کا حصہ) اور اندرونی اجزاء جو پہلے ایرانی ڈرون سے جمع کیے گئے تھے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ ایرانی ساحل سے حملے کے مقامات تک کا فاصلہ ڈرون کی حد کی متعین پرواز کےمطابق ہے۔ امریکی ماہرین نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ یہ ڈرون ایران میں تیار کیا گیا تھا۔

مرسر اسٹریٹ جہاز جو ایک اسرائیلی کمپنی کے زیر انتظام تھا پر ڈرون سے حملہ کیا گیا جس میں عملے کے دو اہلکار ہلاک ہوگئے تھے۔