.

سعودی عرب کے درجنوں سرکاری ادارے’نیشنل ڈیٹا بنک‘ میں رجسٹرڈ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے ڈیٹا اینڈ آرٹیفیشل انٹیلی جنس اتھارٹی (SDAIA) نے ڈیٹا شیئرنگ کے لیے ایک قابل اعتماد چینل بنانے کی کوشش میں 190 سے زائد سرکاری اداروں کے ڈیٹا کو مرکزی آرکائیو میں ضم کرنےکی ڈیٹا بینک کی کامیابی کا اعلان کیا۔

’سدایا‘ نے وضاحت کی کہ ڈیٹا بینک سرکاری سروسز کے "آٹومیشن" اور ڈیجیٹل حل کی فراہمی میں حصہ ڈالے گا۔

یہ اقدام فیصلہ سازی کی حمایت کے لیے قومی پلیٹ فارم بنانے میں بھی مدد کرتا ہے۔ ڈیٹا بینک ایک ڈیجیٹل مارکیٹ فراہم کرے گا ہے جس کے ذریعے ہر قسم کا ڈیٹا مستفید ہونے والے اداروں کے ساتھ شیر کیا جاسکےگا۔

خودکار اور مسلسل اپ ڈیٹ

سعودی ڈیٹا اتھارٹی نے العربیہ کوبتایا 190 سرکاری ادارے خود بخود اور مسلسل اپ ڈیٹ ہوتے رہیں گے۔ اس حوالے سے ڈیٹا کے معیار کو بہتر بنانے اور اس کی درستگی کو یقینی بنانے کے لیے کئی خدمات فراہم کی جا رہی ہیں۔

ڈیٹا بینک میں کئی سرکاری ایجنسیوں کے لیے معلومات شامل ہیں۔ خاص طور پر وزارت انصاف، سول ایوی ایشن جنرل اتھارٹی (جی اے سی اے) اور وزارت انسانی وسائل اور سماجی ترقی شامل ہیں۔

اس کے علاوہ اس میں ہیومن ریسورس ڈویلپمنٹ فنڈ، وزارت تجارت اور سرمایہ کاری، پبلک ٹرانسپورٹ اتھارٹی، وزارت تعلیم، سعودی الیکٹرک کمپنی، وزارت ماحولیات، پانی اور زراعت، زرعی ترقیاتی فنڈ، وزارت میونسپل اور دیہی امور اور ہاؤسنگ، رئیل اسٹیٹ ڈویلپمنٹ فنڈ، زکوٰۃ، ٹیکس اور کسٹمز اتھارٹی، جنرل پنشن ایجنسی، فوڈ اینڈ ڈرگ اتھارٹی، کونسل آف سعودی چیمبرز، جنرل آرگنائزیشن فار سوشل انشورنس، سبل (محکمہ ڈاک) ، وزارت حج و عمرہ، فنی اور پیشہ وارانہ تربیت کی عمومی تنظیم اور وزارت وزارت کھیل کا ڈیٹا بھی سدایا میں رجسٹرڈ کیا جا سکے گا۔