.

سعودی عرب میں کینگرو کے گوشت سے روایتی عرب ڈش مندی پکانے پر تنازع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے متفرق سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پرایک ویڈیو تیزی سے مقبول ہو رہی ہے جس کے بارے میں کہا جاتا ہے اس میں کینگرو کے گوشت سے بنی روایتی ڈش ’مندی‘ دکھائی گئی ہے۔

ویڈیو کے منظر عام پر آنے کے بعد اس پر عوامی حلقوں کی طرف سے سخت ردعمل سامنے آیا ہے۔ دوسری طرف حکومت نے اس واقعے کا نوٹس لیتے ہوئے اس کی انکوائری شروع کردی ہے۔

محکمہ جنگی حیات سعودی عرب نے کینگرو کو ذبح کر کے اس کے گوشت سے روایتی عرب ڈش ’مندی‘ تیار کرنے پر سخت رد عمل ظاہر کیا ہے۔ جنگلی حیات ترقی کے قومی مرکز نے ہفتے کو اس حوالے سے ایک بیان جاری کیا ہے۔

مرکز نے ٹوئٹر کے ذریعے ایک بیان میں کہا کہ اس کلپ میں جو کچھ فلمایا گیا ہے وہ ماحولیاتی نظام کے قانون کی کھلی کی خلاف ورزی ہے۔ اس قانون میں نایاب جنگلی جانوروں کو مارنے یا نقصان پہنچانے سے سختی سے منع کیا گیا ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ کینگرو جیسے جانداروں کی پرورش کی اور خرید وفروخت کے مقصد سے انہیں درآمد کرنے کی اجازت ہے مگر انہیں ذبح کرنے اور گوشت کے طورپر استعمال کرنے کی سخت ممانعت ہے۔

اطلاعات کے مطابق محکمہ جنگی حیات کے عہدیداروں نے کینگرو کے گوشت سے مبینہ طور پر تیار کی گئی روایتی ڈش کی ویڈیو دیکھی ہے جس کے بعد اس کے جرم کے مرتکب افراد کے خلاف سخت کارروائی کے لیے وزارت داخلہ اور دیگر مجاز اداروں کےساتھ رابطہ کیا گیا ہے۔

محکمہ تحفظ جنگلی حیات نے شہریوں پر زور دیا کہ وہ جنگلی حیات کے قانون سے متعلق کہیں بھی ہونے والی خلاف ورزی کے بارے میں ادارے کو مطلع کریں تاکہ اس نوعیت کی سرگرمیوں کے خلاف کارروائی عمل میں لائی جا سکے۔

خیال رہے کہ ایک مشہور "اسنیپ چیٹ" اکاؤنٹ پر پوسٹ کی گئی ویڈیو میں دکھایا گیا تھا کہ سعودی عرب میں بہت سے لوگوں نے ایک کینگرو ذبح کیا اور بعد ازاں اس کا گوشت بنا کر روایتی ڈش مندی تیار کرنے کے لیے استعمال کیا۔

ویڈیو کلپ میں کینگرو کو ذبح کیے جانے سے قبل پنجرے مین زندہ حالت میں بھی دکھایا گیا ہے۔ اس موقعے پر ایک شخص کہہ رہا ہے کہ اس کا گوشت کی بہترین ہے اور چربی سے پاک ہے۔

ویڈیو میں کینگرو کے گوشت کو پکانے پھر اسے "مندی" کے طور پر پیش کرتے بھی دکھایا گیا ہے۔