.

لبنان کو مزید تیل بیچنے کو تیار ہیں: ایرانی حکام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی حکام کا کہنا ہے کہ لبنان کو ضرورت کوپورا کرنے کے لئے مزید تیل فروخت کرنے کو تیار ہیں۔یہ بیان ایسے موقع پر سامنے آیا ہے جب لبنان کی مسلح تنظیم حزب اللہ کے رہنما نے اعلان کیا ہے کہ تیل بحران کے مد نظر ایران سے مزید آئل ٹینکر منگوائے جا رہے ہیں۔

ایران کی وزارت خارجہ کے ترجمان سعید خطیب زادہ نے ہفتہ وار پریس کانفرنس کے دوران بتایا کہ "ہم اپنے فیصلوں اور حلیفوں کی ضرورت کے مطابق تیل اور اس سے بننے والی مصنوعات فروخت کرتے ہیں۔ ایران لبنان کی ضرورت کو پورا کرنے کے لئے مزید تیل فروخت کرنے کو تیار ہے۔"

ان کا مزید کہنا تھا کہ "یقینا ایرانی حکومت لبنانی عوام کو مصیبت کے وقت تنہا نہیں چھوڑ سکتی۔"

اس سے قبل اتوار کے روز حزب اللہ کے سربراہ حسن نصر اللہ نے بتایا کہ ایران سےتیل لانےوالا پہلا بحری جہاز لبنان کے لئے روانہ ہوچکا ہے۔

گذشتہ ہفتے ایران کی نیم سرکاری نور نیوز ویب سائٹ کے مطابق لبنان کے لئے تیل کی تمام کھیپ لبنانی شیعہ تاجروں نے خریدی تھی۔

خطیب زادہ کا کہنا تھا "ہم لبنانی حکومت کو بھی پیشکش کرتے ہیں کہ وہ ہمارے سے مزید تیل بھی خرید سکتی ہے۔"

حزب اللہ کے ناقدین نے ایران سے تیل کی خریداری کے ممکنہ اثرات سے باخبر کرتے ہوئے بتایا کہ ایسے اقدامات سے لبنان پر معاشی پابندیاں لگ سکتی ہیں۔ لبنان کی معیشت پہلے ہی زبوں حالی کا شکار ہے۔

ایران پر امریکا کی جانب سے معاشی پابندیاں عائد ہے جن کے سبب ایران سے تیل کی خرید وفروخت پر پابندی عائد ہے۔