.

سعودی عرب: بحیرہ احمر کے ایک جزیرے میں مرجان کالونی دریافت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں بحیرہ احمر ڈویلپمنٹ کمپنی میں سمندری سائنس اور ماحولیات کے ماہرین نے بحیرہ احمر کےالوقادر جزیرے میں ایک بڑی مرجان کالونی دریافت کی ہے۔ یہ مرجان کالونی جزیرہ الوقادی کے جنوب میں واقع ہے۔

سعودی پریس ایجنسی (ایس پی اے) کے مطابق کمپنی نے وضاحت کی کہ جزیرہ تقریبا 600 سال پرانا ہے اور اس کی اونچائی 10 میٹر سے زیادہ ہے۔

مرجان کی چٹانوں کی عمر کالونی کے بیرونی ڈھانچے پر سالانہ بڑھنے والے حلقوں کے سائز اور تعداد کی پیمائش کے ذریعے طے کی گئی تھی۔اس کے علاوہ سرخ لکڑی کے درختوں کی موجودگی کے ذریعے بھی مرجانی چٹانوں کی عمر کا پتا لگایا گیا۔

مچھلیوں کا غیرمعمولی مسکن

جزیرے میں مرجانی چٹانوں کی کالونی پچھلی صدیوں کا ایک تاریخی حوالہ ہے۔ کالونی سائنسدانوں کو سائنسی طریقوں کے ذریعے مرجان کی چٹانوں کو پڑھنے اور پچھلے سالوں میں سمندر کے درجہ حرارت اور اس وقت کیمیائی ساخت کو جاننے میں مدد دے گی۔

اس کے علاوہ ریڈ سی کمپنی نے کہا کہ یہ دریافت دنیا کےایک بڑے سیاحتی مقام ریڈ سی پروجیکٹ کے مغرب میں واقع الوقادی جزیرے پر سمندری حیات کی خوبصورتی کو اجاگر کرتی ہے۔

یہ کالونی بڑی تعداد میں مچھلیوں کے لیےایک مسکن بن سکتی ہے۔ مرجان کالونیوں کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ کئی وجوہات ہیں جو مرجان کی چٹانوں کی زندگی کو متاثرکرتی ہیں۔

مرجان بلیچنگ

مرجان بلیچنگ کے رجحان سے متاثر ہو کران کی زندگی کو متاثر کرتی ہے جو کہ پانی کے غیر معمولی درجہ حرارت سے جڑا ہوا ہے اور موسمی تبدیلی کی وجہ سے سمندر کے پانی کے درجہ حرارت میں اضافے کے ساتھ اس کا پھیلاؤ بڑھ رہا ہے۔

کورل بلیچنگ مرجان کی چٹانوں کے ساتھ ساتھ بہت سے دوسرے سمندری جانداروں کی موت کا باعث بن سکتا ہے جو مرجان کے ساتھ رہتے ہیں اور متاثر کرتے ہیں۔

ریڈ سی کمپنی مرجان کی چٹانوں کے ماحول کو بڑھانے اور پراجیکٹ ایریا میں ان کے ماحولیاتی تنوع کو بڑھانے کے لیے کام کر رہی ہے۔ اس نے کمیونٹیوں سے اپیل کی ہے کہ وہ سمندری حیات کےتحفظٖ کو یقینی بنائیں اورآلودگی اور شکار کے ذریعے آبی مخلوقات کے وجود کو خطرے میں نہ ڈالیں۔