.

سعودی عرب نے لبنان سے منشیات کی اسمگلنگ کی کوشش ناکام بنا دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی وزارت داخلہ کا کہنا ہے کہ حکام نے لبنان سے بھیجی جانے والے منشیات کی بھاری مقدار قبضے میں لے کراسے دوسرے ملک کو اسمگل کرنے کی کوشش ناکام بنا دی۔

وزارت داخلہ کے ترجمان برائے سیکیورٹی امورکرنل طلال الشھلوب نے آج جمعرات کو بتایا کہ لبنانی دہشت گرد تنظیم حزب اللہ سے منسلک منشیات گینگ کی طرف سے سعودی عرب کے راستے ایم فیٹامین منشیات کی451،807 گولیاں وفاقی جمہوریہ نائیجریا کو بھیجی جا رہی تھیں۔ منشیات کو مشینوں کے آلات اور ان کے پرزوں میں چھپایا گیا تھا۔

سیکیورٹی ترجمان نے وفاقی جمہوریہ نائیجیریا کے حکام کی طرف سے منشیات پکڑنے کی کارروائی میں مثبت تعاون کی تعریف کی۔

سعودی خبر رساں ادارے ’ایس پی اے‘ کے مطابق مملکت مجرمانہ سرگرمیوں کی روک تھام اور منشیات جیسے مکروہ دہندے میں ملوث عناصر کی روک تھام کے لیے کوششیں جاری رکھےگی۔ وزارت داخلہ نے عوام الناس پر زور دیا ہے کہ وہ منشیات کی اسمگلنگ کی مشکوک سرگرمیوں پرنظررکھیں اور ایسی کسی بھی مجرمانہ کوشش پر مجازحکام کو مطلع کریں۔

خیال رہے کہ گذشتہ جون میں سعودی وزارت داخلہ نے اعلان کیا تھا کہ اس نے لبنان سے آنے والی آئرن پلیٹوں کی کھیپ میں 14.4 ملین نشہ آور گولیاں اسمگل کرنے کی کوشش ناکام بنا دی تھی۔ 23 اپریل کو پتا چلا تھا کہ لبنانی حزب اللہ سبزیوں اور پھلوں کے ذریعے منشیات کی اسمگلنگ کررہی ہے۔ اس انکشاف کے بعد مملکت نے لبنان سے سبزیوں اور پھلوں کے داخلے یا ٹرانزٹ پر پابندی عاید کردی تھی۔ یہ فیصلہ اس وقت کیا گیا تھا جب سبزیوں اور پھلوں کی گاڑیوں کے ذریعے منشیات کی بیس لاکھ گولیاں ضبط کی گئی تھیں۔

سعودی عرب نے اس مسئلے پر تبصرہ کرتے ہوئے منشیات کو مملکت کی سلامتی کےلیے ایک سرخ لکیرقرار دیا تھا ہے۔