.

"دانا" یورپی والی بال پروگرام میں حصہ لینے والی پہلی سعودی کوچ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی خواتین کھلاڑی عالمی سطح پر ملک کا نام روشن کر رہی ہیں۔ عالمی سطح پر کھیل کے میدانوں میں نمایاں مقام حاصل کرنے والا ایک نام ’دانا علی محسن‘ ہے۔

انہوں نے سعودی عرب کے والی بال فیڈریشن کے تعاون سے یورپی یونین کے والی بال پروگرام میں پہلی بار شرکت کی ہے۔ دانا پہلی سعودی خاتون ہیں جنہوں نے یورپی سطح پر کسی والی بال پروگرام میں ایک کوچ کے طور پر شرکت کی۔ یہ پروگرام 24 سے 26 ستمبر تک سلوینیا کے شہر کرنجسکا گورا میں منعقد ہوا۔

یہ یورپی پروگرام زمینی سطح پر کام کرنے والے کوچز اور فزیکل ایجوکیشن اساتذہ کے لیے ایک معاہدے کے طور کام کرتا ہے۔ اس پروگرام میں سعودی کوچ کو ایشیائی براعظم کے 10 کوچوں میں سے منتخب کیا گیا تھا۔ یہ کوچز والی بال سے متعلق قومی منصوبوں میں حصہ لیتے ہیں۔

والی بال دانا علی محسن کا بچپن کا شوق ہے۔ اس نے والی بال کے میدان میں اپنی صلاحیتوں کو بہتر بنانے کی ہر سطح پر کوشش کی۔ اسے والی بال کھیلنے کا جہاں اور جب موقع ملا اس نے کھیلا۔ اس نے نوجوان لڑکیوں کو والی بال کی تربیت دینے کے لیے ’بلو کلکر‘ کے نام سے ایک ٹیم بنائی جس میں 40 خواتین کھلاڑیوں کو رکھا گیا۔

یہ قابل ذکر ہے کہ یورپی والی بال پروگرام کی سرگرمیوں میں 150 سے زائد مرد و خواتین کوچز نے حصہ لیا۔یہ پروگرام والی بال کے کھیل کے فروغ، ترقی میں مہارت اور تجربات کے تبادلے کے لیے ایک زرخیز ماحول فراہم کرتا ہے۔

سعودی کوچ دانا علی محسن نے کہا کہ میں تربیت کے میدان میں مملکت کی نمائندگی کرتے ہوئے بہت خوش اور فخر محسوس کرتی ہوں۔ میں نے جو کچھ اس پروگرام سے سیکھا ہے اسے سعودی عرب کی والی بال فیڈریشن کے ذریعے دوسروں تک پہنچانے کی کوشش کروں گی۔

اس نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ کورس میں 150 سے زائد کوچز اور ٹرینرز نے حصہ لیا جنہیں والی بال کی ٹریننگ کے شعبے میں بہت اچھا تجربہ ہے۔