.

سعودی طلباء کی ہوا بازی اور خلا کی تعلیم کے لیے وظائف کی تفصیلات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی خلائی اتھارٹی نے خلا اور خلائی ٹیکنالوجی کے شعبوں میں مہارت رکھنے والے قومی عملےکو کوالیفائی کرنے اور ترقی دینے کے لیے اقدامات شروع کر دیے ہیں۔اس حوالے سے کل منگل کو بیچلر اور ماسٹر لیول کے لیے "اسپیس سکالرشپ" پروگرام کی پہلی کھیپ بھیجنےکا فیصلہ کیا گیا۔

اسپیس اتھارٹی نے بتایا کہ اس پروگرام میں سعودی طلبا کو دُنیا کی 30 بہترین جامعات میں اسکالرشپ کے تحت ایرو اسپیس انجینئرنگ ، خلائی علوم اور خلائی پالیسیوں کے شعبوں تعلیم کے لیے بھیجنے کا پروگرام شامل ہے۔ اس اسکالرشپ پروگرام کے تحت طلبا کو تعلیمی اخراجات ، مالی تحفظ ، صحت کی دیکھ بھال کے علاوہ سعودی عرب سے مشن ہیڈکوارٹر تک کے سفر کے ٹکٹ اور وزرارت تعلیم کی طرف سے وضع کردہ معیار کے مطابق رہ نمائی جیسی سہولیات شامل ہوں گی۔

کمیشن نے وضاحت کی کہ "خلائی اسکالرشپ" پروگرام قومی انسانی سرمائے کو سعودی عرب میں خلائی شعبے کے لیے اہم ترین اور فعال بنانے پر مرکوز ہے تاکہ ترجیحی شعبوں میں با صلاحیت افراد کے لیے معیاری تعلیم کا بندوست کرنے، خلائی شعبے ، ریسرچ ، ڈویلپمنٹ اور انوویشن کے شعبوں میں مملکت کی صلاحیتوں کو فروغ دیتے ہوئے طلباء کو دُنیا کی بڑی جامعات داخلہ دلوایا جا جائے۔ تاکہ عالمی یونیورسٹیوں اور تحقیقی مراکز، خلائی سائنس میں مہارت رکھنے والے بین الاقوامی تحقیقی اداروں کے ساتھ شراکت داری اور سائنسی مہارتوں کی راہ ہموار کی جاسکے۔