.

’وژن 2030‘ نے تضادات کو حل اور ہماری شناخت کو محفوظ کیا: وزیر توانائی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے وزیر توانائی اور شاہ فہد یونیورسٹی آف پٹرولیم اینڈ منرلز کے بورڈ آف ٹرسٹیز کے چیئرمین شہزادہ عبدالعزیز بن سلمان نے کہا ہے کہ مُملکت تبدیلی کے ایک بڑے عمل سے گزر رہی ہے جس میں وژن 2030 بھی شامل ہے۔ اس وژن میں تمام اقتصادی اور سماجی شعبے شامل ہیں۔ ہم نے موثر قیادت کی سرپرستی میں اس وژن کا پھل حاصل کرنا شروع کریا ہے۔ اس وژن کے تحت پیش کردہ منصوبوں کو اپنی آنکھوں سے کامیاب ہوتا دیکھ رہے ہیں۔

انہوں نے ان خیالات کا اظہاریونیورسٹی کی انڈرگریجویٹ طالبات کے پہلے بیچ کی پاسنگ آؤٹ کے موقعے پر کیا۔

انہوں نے کہا کہ میں اپنے آپ سے پوچھتا ہوں اور میں ان لوگوں سے پوچھتا ہوں جو مجھے سنتے ہیں۔ ہم اس موقع پر کس سے مل سکتے ہیں لیکن وژن؟ وژن وصیت ہے۔ وژن تبدیلی چاہتا تھا۔ اس نے تضادات کو دور کیا اور ہچکچاہٹ پر فتح پائی جب کہ ریاست اور معاشرے کی پہچان کو محفوظ رکھنے میں مدد دی۔

یونیورسٹی میں تعلیم کے بارے میں وزیر توانائی اس یونیورسٹی میں میں نے اپنی جوانی کے سب سے خوبصورت دن گزارے۔ میں اس کی راہداریوں ، ہالوں اور رہائش کے کمروں کو جانتا ہوں۔ آج مجھے اس پر فخر ہے اس کے فارغ التحصیل طلبا اور طالبات کی صنعتی میدان میں داخل ہونے پر رشک کرتا ہوں۔