کرپشن کیسز میں سعودی عدالت سے افسروں سمیت متعدد ملزمان کو سزائیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی عرب میں انسداد بدعنوانی کمیشن کے ایک سرکاری ذریعے نے بتایا ہے ہے کمیشن نے گذشتہ کچھ عرصے کے دوران کرپشن کے متعدد مقدمات کی تحقیقات مکمل کرنے کے بعد ملزمان کو سزائیں سنائی ہیں۔ان میں افسر اور سرکاری ملازمین بھی شامل ہیں جنہیں بدعنوانی کے مقدمات میں جیل کی سزائیں اور جرمانے کیے ہیں۔

بدعنوانی کے حالیہ ایام میں نمٹائے گئے کیسز میں سب سے اہم کیس ایک تجارتی ادارے کے منیجراورایک بینک میں کام کرنے والے دو ملازمین کا ہے جنہیں گرفتار کیا گیا۔ تجارتی ادارے کے منیجر نے ایک بڑی "جعلی" کمپنی کا کنٹریکٹ بنک میں پیش کیا اور تجارتی ادارے نے 102،000،000 ریال کی رقم کی مالی اعانت حاصل کی۔ بینک کے ملازمین نے اس کے ماخذ کا جواز پیش نہیں کیا۔ اس دوران ایک بنک ملازم کے اکاؤنٹ میں700000 ریال کیش ڈپازٹ کیئے گئے جن کا ماخذ نہیں بتایا گیا کہ یہ رقم کہاں سے آئی ہے۔

اس کے علاوہ ڈائریکٹر ہیلتھ افیئرز، ایک قرنطینہ سپروائزر اور صحت کے امور کے ساتھ معاہدہ کرنے والی کمپنیوں میں سے ایک کے لیے کام کرنے والے ایک غیرملکی کو گرفتار کیا گیا۔ ان پرایک خاتون کو بلیک میلنگ کی شکایت نہ کرنے پر نوکری کی پیشکش کی گئی۔

تحقیقات کے ذریعے ظاہر ہوا کہ ڈائریکٹر ہیلتھ افیئرز نے ایک تجارتی ادارے کو بطور قرنطینہ سپروائزر کے باپ کی ملکیت میں منتقل کیا اور اس کے واجبات ادا کیے اور اس کے بدلے میں پانچ لاکھ ریال وصول کیے۔

افسران گرفتار

سرحدی حد بندی پر نگران کمیٹی کے لیے کام کرنے والے کرنل اور نان کمیشنڈ افسر کے عہدے کا ایک افسر اور ایک شہری کو سرحدی علاقوں میں واقع رئیل اسٹیٹ کے علاقوں اور مقامات میں ہیرا پھیری کرنے پر گرفتار کیا گیا۔ ان کے ذریعے جائیداد کی کل قیمت کا 50 فی صد کمیشن وصول کیا گیا تھا۔

چوتھا کیس جس میں نیشنل واٹر کمپنی کے ملازم کو گرفتار کیا گیا تھا جس پر ایک رئیل اسٹیٹ کمپنی سے 600،000 چھ لاکھ ریال میں سے 300،000 تین لاکھ ریال کی رقم وصول کرتے ہوئے وزارت امور میونسپل ، دیہی ، رہائش اور کمپنی کی بندرگاہ سے وابستہ رہائشی ولا تعمیر کرنے کے منصوبے کے لیے پانی کی فراہمی کے طریقہ کار کو مکمل کرنے کی منظوری دی گی تھی۔

ایک ریجن میں جیل انتظامیہ میں کام کرنے والے ایک نان کمیشنڈ افسر کو اس کی غیر قانونی رہائی کے بدلے منشیات کے مقدمے میں ایک قیدی سے ملین ریال کی رقم وصول کرنے پر گرفتار کیا گیا۔

مالی بدعنوانی

ایک فلاحی ایسوسی ایشن کے قیام اور انتظام کے لیے ایک علاقے میں دو خواتین شہریوں کو گرفتار کیا گیا۔ ان خواتین پر فلاحی تنظیم کی آڑ میں چندہ جمع کرنےکا الزام ہے۔ انہوں نے 748.404 ریال اپنے ذاتی اکاؤنٹس میں منتقل کیے جب کہ شیڈنگ سپروائزری اتھارٹیز ایسوسی ایشن کے تربیتی کورسز اور اخراجات پر ان رقوم کی ادائیگی اور غلط رسیدیں جمع کرائی گئیں۔

ایک غیرملکی کو گرفتار کیا گیا جس نے قانونی خلاف ورزی کا چالان منسوخ کرانے کےلیے ایک متعلقہ افسر کو100،000 ریال اور ایک موبائل فون رشوت دینے کی کوشش کی تھی۔ وہ ایک گودام کو کھولنا چاہتا تھا جس اسے قبل وزارت تجارت نے سیل کرا دیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں