.

سعودی وزیرمذہبی امور کا اعتدال پسندی کے فروغ میں تعاون کے لیے البانیا کا دورہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے وزیر برائے مذہبی امور ڈاکٹرعبد اللطیف آل الشیخ نے کہا ہے کہ ان کے دورہ البانیا کا مقصد خادم الحرمین الشریفین اور ولی عہد کی ہدایت کے مطابق اعتدال پسندانہ اسلامی تعلیمات کو فروغ دینا تھا۔

البانیا کے دورے سے واپسی پر ایک بیان میں سعودی وزیرمذہبی امور نے کہا کہ ان کے دورے کا مقصد اسلام کی اعتدال پسند اور روشن خیال شبیہ پیش کرنے اور دنیا بھر کے علما اور دینی شخصیات سے اس حوالے سے رابطے کی کوششوں کا حصہ ہے۔

ڈاکٹر عبداللطیف آل الشیخ نے کہا کہ انہوں نے یہ دورہ ایک ایسے وقت میں کیا ہے جب جمہوریہ البانیا اور سعودی عرب کے درمیان کئی شعبوں میں پہلے ہی مضبوط تعلقات اور تعاون موجود ہے۔ ان کے دورے کے ذریعے دونوں ممالک کے علما اور قیادت نے اسلام کی حقیقی اور اعتدال پسند تصویر پیش کرنے، غلو، انتہا پسندی اور نفرت پر مبنی تصورات کو مسترد کرنے پراتفاق کیا ہے۔

ڈاکٹر آل الشیخ نے ان خیالات کا اظہار اپنے دورہ البانیا کے دوران تیرانا ہوائی اڈے پر پہنچنے کے بعد ایک پریس بیان میں کیا۔

البانیا پہنچنے پر سعودی وزیر مذہبی امور اور ان کے ہمراہ آنے والے وفد کا سرکاری سطح پر استقبال کیا گیا۔ سعودی وزیر مذہبی امور نے جمہوریہ البانیا کے اسلامی مرکز کی دعوت پریہ دورہ کیا۔

البانیا پہنچنے پر جمہوریہ میں اسلامی مشیخہ کے سربراہ بویار سباھیو، تیرانا کے مفتی اعظم الشیخ لاروان لولی، البانیا میں خادم الحرمین الشریفین کےسفیر فیصل حفظی، سفارت خانے کے دیگر عہدیدار موجود تھے۔

آل الشیخ نے اسلام کے حقیقی منھج کے مطابق اقامت دعوت دین، انتہا پسندی اور نفرت کے انسداد اور دین رحمت کی توہین پرمبنی تعلیمات کی روک تھام کی اہمیت پر زور دیا۔