.

وزیر اطلاعات کا غیر ذمے دارانہ بیان، لبنانی معیشت کو 1.5 ارب ریال خسارے کا سامنا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنانی وزیر اطلاعات جارج قرداحی کی جانب سے دیے گئے نامناسب بیان کے سبب ان کے ملک کو سالانہ قریبا 1.5 ارب ریال (538.8 کروڑ ڈالر) کے نقصان کا خطرہ پیدا ہو گیا ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ سعودی عرب نے مذکورہ وزیر کے بیان کی مذمت کرتے ہوئے گذشتہ روز لبنان سے مملکت کے لیے تمام درآمدات روک دینے کا اعلان کر دیا۔

رپورٹوں کے مطابق لبنان کی 30 % برآمدات خلیجی ممالک کو جاتی ہیں جن کی مجموعی مالیت 3.3 ارب ریال (89.1 کروڑ ڈالر) بنتی ہے۔ اس میں سے 44 % برآمدات کی منزل سعودی عرب ہے جن کی مالیت 1.5 ارب ريال (38.85کروڑ ڈالر) بنتی ہے۔ اس فہرست میں امارات دوسرے اور کویت تیسرے نمبر پر ہے۔

اس کے مقابل رواں سال 2021ء کے ابتدائی پانچ ماہ میں ایران کے لیے لبنانی برآمدات کا حجم بہت کم (70 لاکھ ڈالر) رہا۔

تجزیہ کاروں کے مطابق لبنان کی معیشت کی بنیاد مرکزی طور پر خلیجی ممالک پر قائم ہے۔