.

جدہ بندرگاہ پر’لاجسٹکس زون‘ کے قیام کے لیے میرسک اور بندرگاہ اتھارٹی میں معاہدہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی پورٹس اتھارٹی "موانی " اور لاجسٹک اینڈ شپنگ کمپنی ’سعودی مرسک‘ نے جدہ اسلامک پورٹ پر مشرق وسطیٰ کے سب سے بڑے مربوط لاجسٹکس ایریا کے قیام کا معاہدہ کیا ہے۔ معاہدے کی تقریب میں سعودی عرب میں ٹرانسپورٹ اور لاجسٹک سسٹم کے کئی سرکردہ عہدیدار اور اعلیٰ حکام بھی موجود تھے۔

بندرگاہ اتھارٹی نے کل اتوار کو ایک بیان میں کہا کہ اس معاہدے پر سعودی پورٹس اتھارٹی کے سربراہ عمر بن طلال حریری اور سعودی عرب میں مرسک انٹرنیشنل کے جنرل منیجر محمد شہاب نے دستخط کیے۔

معاہدے کے تحت مرسک اور سعودی پورٹس اتھارٹی کے تعاون سے جدہ اسلامی بندرگاہ میں ایک مربوط لاجسٹک زون قائم کیا جائے گا جس میں مرسک کی سرمایہ کاری 500 ملین ریال سے زیادہ ہو گی۔

سعودی عرب کے ٹرانسپورٹ اور لاجسٹکس کے وزیر اور بندرگاہوں کی جنرل اتھارٹی کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کے چیئرمین صالح بن ناصر الجاسر نے کہا کہ عالمی کمپنی "مرسک" کے ساتھ یہ اسٹریٹجک معاہدہ نقل و حمل کے لیے قومی حکمت عملی کے مقاصد کے حصول کا حصہ ہے۔اس سے لاجسٹک سروسز، عالمی لاجسٹکس سینٹر اور بین الاقوامی تجارتی خطوط کے درمیان ایک اہم ربط کے طور پر مملکت کی پوزیشن کو بڑھانے میں اہم کردار ادا کرے گا۔

انہوں نے وضاحت کی کہ لاجسٹکس کا یہ نیا علاقہ مملکت میں لاجسٹکس کی صنعت کی ترقی کو سہارا دے گا اور تین براعظموں کے وسط میں ایک مرکزی علاقہ ہو گا۔

سعودی وزیر نے کہا کہ لاجسٹکس زون معاشی اور ترقیاتی سرگرمیوں میں معاونت میں اہم کردار ادا کرے گا، مملکت میں غیر تیل کی برآمدات کے حصص کی جذب صلاحیت میں 50 فیصد اضافہ کرے گا اور لاجسٹکس کے شعبے میں روزگار کے مواقع پیدا کرے گا۔ اس معاہدے سے پہلے مرحلے میں مقامی سطح پر 2,500 سے زیادہ ملازمتیں ملیں گی۔