.

شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والی سعودی ویٹ لفٹر سے ملیے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے اندر اور باہر ویٹ لفٹنگ میں میڈلز اور اعلیٰ پوزیشنیں جیت کر چیمپئن شپ کی تاریخ میں اپنا نام لکھوانے میں کامیاب ہونے والی ایک ویٹ لفٹر نے ویٹ لفٹنگ کے میدان میں ملک اور قوم کا نام روشن کیا ہے۔خدیجہ المومن کی ان کامیابیوں کے پیچھے بہترین تربیت اور 7 سال سے زائد عرصے کا تجربہ ہے۔

خدیجہ نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ میں نے 2021 میں سعودی عرب میں منعقد ہونے والی پہلی ویٹ لفٹنگ چیمپئن شپ میں حصہ لیا اور پہلی پوزیشن حاصل کی۔ پھر بحرین چیمپئن شپ سمیت کئی چیمپئن شپ میں حصہ لیا اور اس میں چوتھی پوزیشن حاصل کی۔

ویٹ لفٹنگ کھیل

ویٹ لفٹنگ کے کھیل میں اپنی دلچسپی کے بارے میں بات بات کرتے ہوئے خدیجہ نے کہا کہ یہ اس کا بچپن سے کا شوق ہے مگر وہ ہرقسم کا کھیل کھیلنے کا شوق رکھتی ہے۔ اس نے بیرون ملک سفر کیا جہاں اس نے ویٹ لفٹنگ اور باڈی بلڈنگ کے کھیل کو سیکھنے کا موقع ملا۔ اس نے بتایا کہ میں نے برسوں اس کی مشق کی۔ یہ صحت اور تندرستی کے لیے ایک مخصوص کھیل ہے۔

خدیجہ کا کہنا تھا کہ ویٹ لفٹنگ پر مردوں کی اجارہ داری رہی ہے۔ کیونکہ خواتین میں اس کا کلچر نہیں تھا کہ وہ اس تجربے میں داخل ہو سکیں۔ یورپی ممالک میں یہ کھیل مرد اور خواتین دونوں کے لیے دستیاب ہے۔خدیجہ نے اپنے بیرون ملک سفر سے کام لیا اور تربیت سے فائدہ اٹھایا۔

اس قسم کے کھیل کو معاشرے کی قبولیت کے بارے میں بات کرتےہوئے کہا سعودی عرب میں خواتین اس کھیل کی مشق کر رہی ہیں۔ مشرق وسطیٰ اور ایشیا میں عرب اور بین الاقوامی چیمپئن شپ میں حصہ لیتی ہیں اور سعودی عرب میں کھیلوں کی اتھارٹی کی جانب سے اس سرگرمی کے لیے بھرپور تعاون حاصل ہے۔