.

سر سے جڑی مصری بچیاں سعودی عرب میں آپریشن کے لیے تیار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سارہ اور سلمیٰ عبدالغنی نے اپنی زندگی کے پہلے دو سال ایسی حالت میں گذارے کہ وہ پیدائشی طور پر سروں سے ایک دوسرے کے ساتھ جڑی ہوئی ہیں۔ سرسے جڑے ہونے کے باعث وہ آزادانہ طورپر حرکت کرنے سے قاصر ہیں اور ان کی زندگی ان دونوں کے لیے غیرمعمولی حد تک مشکل ہے۔ وہ اپنی مرضی سے حرکت تک نہیں کرسکتیں۔

کوئی بھی عمل یا حرکت جو آپ کو مل کر کرنی چاہیے تھی بلاشبہ دونوں بچیوں کے لیے مشکل تھی۔ ان کی "نفسیاتی" اور حرکیاتی طور پر نشوونما میں بھی ایک بڑی رکاوٹ ہے۔

تاہم سارہ اور سلمیٰ دونوں کے لیے آنے والے گھنٹوں میں ایک نئی زندگی شروع کرسکتی ہیں کیونکہ وہ ریاض میں ایک دوسرے سے الگ کرنے کے آپریشن کےعمل سے گذریں گی۔

دونوں لڑکیاں علیحدگی کے عمل کے لیے گذشتہ منگل کو اپنے والدین کے ہمراہ سعودی دارالحکومت پہنچیں۔

"آنے والے دن عید ہیں"

خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان کی ہدایت پرمصرسے تعلق رکھنے والی بچیوں کو علاج کے لیے مصر لانے کی ہدایت کی تھی۔

جڑواں بچیوں کو قاہرہ سے ریاض منتقل کر دیا گیا جہاں انہیں وزارت نیشنل گارڈ کے کنگ عبداللہ سپیشلسٹ چلڈرن اسپتال میں داخل کیا گیا ہے تاکہ ان کے سرجری کیس کا مطالعہ کیا جا سکے اور انہیں الگ کرنے کے عمل پر غور کیا جا سکے۔

دونوں لڑکیوں کے والد نے اس فراخدلانہ اقدام پر مملکت کا شکریہ ادا کیا۔ ان کی والدہ نے العربیہ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ وہ جو کچھ محسوس کر رہی ہیں وہ ناقابل بیان ہے۔ اس کا کہنا ہے کہ ’’آنے والے دن عید... عید ہیں۔"

قابل ذکر ہے کہ یہ جڑواں بچں کا 118 واں کیس ہے جو دنیا کے 22 ممالک سے سعودی عرب میں علاج کے لیے لائے گئے۔