.

خالد الفیصل کی جانب سے روس کو پیش کیے گئے فن پارے کی مصورہ کیا کہتی ہیں؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی فرماں روا شاہ سلمان بن عبدالعزیز کے مشیر اور مکہ مکرمہ کے گورنر شہزادہ خالد الفیصل نے مملکت کی جانب سے روس کو ایک تحفہ پیش کیا ہے۔ یہ تحفہ دونوں ملکوں کے بیچ تعلقات کے 95 برس پورے ہونے کے موقع پر دیا گیا ہے۔

ی تحفہ ایک فن پارے کی شکل میں ہے جس کو " تاریخ و مستقبل" کا نام دیا گیا ہے۔ تاتارستان کے صدر نے روس کی جانب سے یہ تحفہ وصول کیا۔

یہ سرگرمی "روس اور عالم اسلام" کے عنوان سے منعقد تزویراتی رؤیت کے مجموعے کے اجلاس کے ضمن میں سامنے آئی۔ خادم حرمین شریفین شاہ سلمان کے زیر سرپرستی یہ اجلاس جدہ میں ہو رہا ہے۔

مذکورہ فن پارہ سعودی خاتون فن کار نبیلہ ابو جدائل نے ریشم پر تیار کیا۔

نبیلہ کا کہنا ہے کہ یہ بات ان کے لیے قابل افتخار اور باعث اعزاز ہے کہ ان کے فن پارے کو وزارت خارجہ نے شہزادہ خالد الفیصل کی جانب سے روس کو پیش کرنے کے واسطے منتخب کیا۔

نبیلہ کے مطابق فن پارے میں باز (پرندے) کو اس لیے شامل کیا گیا کیوں کہ یہ سعودی عرب اور روس کے درمیان مشترکہ ثقافت ہے۔

یاد رہے کہ سعودی خاتون فن کار نبیلہ ابو الجدائل نے مصوری کی تعلیم امریکا میں نارتھ ایسٹرن اور ہارورڈ کی جامعات میں حاصل کی۔