عمان اور سعودی عرب کے درمیان زمینی فاصلہ 800 کلومیٹر کم: وزیر ٓٹرانسپورٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ایک مشترکہ بیان میں سعودی عرب اور عمان نے سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے مسقط کے دورے کے ساتھ دونوں ممالک کے درمیان زمینی راستہ کھولنے کے اعلان کا خیرمقدم کیا ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ سعودی ولی عہد کا یہ دورہ دونوں ممالک کے درمیان تاریخی تعلقات کی تصدیق کرتا ہے۔

ولی عہد کے دورے کے اختتام پر جاری ہونے والے بیان میں اوپیک + کی کوششوں کی تعریف کی گئی جو تیل کی منڈیوں میں استحکام اور توازن کا باعث بنی۔ مملکت 2030 اور عمان کے وژن 2040 کے مطابق دونوں ممالک کے درمیان اقتصادی تعاون میں اضافے پر زور دیا۔

سعودی وزیر ٹرانسپورٹ اور لاجسٹکس انجینیر صالح الجاسر نے العربیہ کو دیے گئے ایک انٹرویو میں کہا کہ زمینی سڑک صحرا ربع الخالی سے گذرے گی اور دونوں ممالک کے درمیان مسافروں کے لیے ایک نئی سہولت ملےگی۔ ۔یہ سفری نقل و حرکت کو بھی آسان بنانے میں مددے گی اور دونوں ممالک کے درمیان موجودہ مسافت کو 800 کلومیٹر تک کم کردے گی۔

الجاسر نے کہا کہ زمینی راستے کا مملکت اور سلطنت عمان کے درمیان علاقائی تجارتی نقل و حرکت پر مثبت اثر پڑے گا۔ انہوں نے خلیجی ممالک اور عرب دنیا کے ساتھ مشترکہ ورکنگ ریلیشن شپ کو بڑھانے کے لیے مملکت کی قیادت کی خواہش کا اعادہ کیا۔

سعودی وزیر ٹرانسپورٹ نے کہا کہ سعودی عرب اور عمان کے درمیان سڑک ان علاقوں میں ترقی کرے گی جن سے یہ گذرے گی۔ افراد اور سپلائی چین میں بھی مدد دے گی۔ دونوں ممالک کے درمیان تجارتی نقل و حرکت اور شراکت داری میں اضافہ کرے گی۔

عمانی سرمایہ کاروں نے سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے سلطنت عمان کے دورے کی اہمیت پر زور دیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں