مسجد حرام میں 36 ملین معتمرین اور نمازیوں کے انتظامات کیسے کیے گئے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

حرمین شریفین کے انتظامی امور کے ذمہ دار ادارے صدارت عامہ برائے امور حرمین نے انکشاف کیا کہ 2/17/1442 ہجری سے 3/5/1443 ہجری تک 36 ملین سے زائد زائرین اور نمازیوں کا مسجد حرام میں استقبال کیا گیا۔ کرونا وبا کے اثرات کم ہونے کے بعد نمازیوں اور زائرین کی مسجد حرام میں آمد کے آغاز سے ہی صدارت عامہ برائے حرمین شریفین نے مختلف پیشہ ورانہ طریقے سے کام کیا۔ بیان میں واضح کیا کہ پابندیوں میں نرمی کے بعد اب تک 14234501 مسلمان عمرہ کی سعادت حاصل کرچکے ہیں۔ جب کہ مسجد حرام میں نمازیوں کی تعداد 22184917 تک پہنچ گئی۔

صدارت عامہ کی سلامتی ،حفاظت اور ہنگامی حالات و خطرات سےنمٹنے کی ذمہ دار ایجنسی، مسجد حرام میں نمازیوں اور معتمرین کے ھجوم کو کنٹرول کرنے کی ذمہ دار ایجنسی نے دیگر متعلقہ اداروں کے ساتھ مل کر مسجد اور اس کی بیرونی سہولیات کے اندر سروس سسٹم کی مدد کے لیے 1300 سے زیادہ افراد کو ذمہ داریوں پر مامور کیا۔ ان میں مرد اور خواتین دونوں طرح کے رضا کار شامل ہیں۔یہ رضا کار ایک واضح طریقہ کار اور سوچے سمجھے منصوبے کے مطابق مل کر کام کرتے ہیں۔ اس کا مقصد موسموں کے دوران مسجد حرام میں فراہم کی جانے والی تنظیمی اور حفاظتی خدمات کے نظام کو مربوط بنانا ہے۔

سیکیورٹی، گروپنگ اور ہجوم کے انتظام میں شامل مختلف سرکاری اداروں کے ساتھ مشترکہ تعاون کے ذریعےملازمین گروپنگ اور سیکورٹی پلانز کی پیشرفت کی نگرانی اور پیروی کرنے کے کام انجام دیتے ہیں جو منظم اور مؤثر طریقے سے خدمات فراہم کرتے ہیں۔

اہل قومی کیڈرز عظیم الشان مسجد کے دروازوں سے داخل ہونے والوں کے داخلے کے عمل کو منظم کرنے، راستوں کو کنٹرول کرنے، احتیاطی تدابیر کے حصول، صحن، عبادت گاہوں اور چھت تک رسائی کو منظم کرنے کے لیے بین الاقوامی معیارات کے تحت وضع کردہ طریقہ کار کے مطابق کام کرتے ہیں۔

صدارت عامہ برائے امور حرمین نے بہت سے مطالعات، فیلڈ ریسرچ اور میکانزم کے ساتھ مرد اور خواتین ملازمین کی تربیت کی اور انہیں مختلف ذمہ داریاں سونپی ہیں۔ اس کا مقصد بیت اللہ میں داخلے، آمد ورفت کے لیے نقل و حرکت میں آسانی، معتمرین کو منظم رکھنا اوراحتیاطی تدابیر پر عمل کرانا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں