جازان میں 199 ملین ریال سے زیادہ مالیت کے صحت کے منصوبے شروع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کے علاقے جازان میں حکومت کی طرف سے صحت کے منصوبوں کا ایک پیکج شروع کیا گیا ہے جس کی لاگت 41 ملین ریال سے زیادہ ہے۔اس میں سعودی وزارت صحت کی جانب سے نافذ کردہ صحت کی خدمات اور سہولیات کا نظام بھی شامل ہے۔

اس وقت جازان جنرل اسپتال کی بحالی کےلیے 158,904,048 ریال کی رقم صرف کی گئی جس کے بعد جازان ریجن کے گورنر شہزادہ محمد بن ناصر بن عبدالعزیز کی سرپرستی میں اور ڈپٹی گورنر کی موجودگی میں اس کا افتتاح کیا گیا اس موقعے پر وزیر صحت فہد الجلاجل بھی موجود تھے۔

اسپتال میں 24 کلینک شامل ہیں جن میں 3 خصوصی کلینک شامل ہیں۔ اسپتال کی گنجائش میں 40 فی صد اضافہ کیا گیا ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ جنرل اسپتال کے لیے جدید آلات، علاج کے لیے استعمال ہونے والی مشینری اور قابل عملہ تعینات کیا گیا ہے۔

جنرل وارڈ میں داخل مریضوں کے لیے بستروں کی تعداد 100 سے بڑھا کر 200 جبکہ ایمرجنسی وارڈ میں بستروں کی تعداد21 سے بڑھا کر31 کردی گئی ہے۔نوزائیدہ بچوں کے لیے قائم چلڈرون وارڈ میں 34 بستر فراہم کیے گئے ہیں آپریٹنگ رومز میں 6 کمروں کا اضافہ کیا گیا ہے۔ معاون طبی شعبوں کے علاوہ جن میں لیبارٹری، فارمیسی اور ریڈیولاجی شامل ہیں میں جدید ترین اور بہترین طبی آلات فراہم کیے گیے ہیں۔

صحت مرکز کی ترقی

اس کے علاوہ منصوبوں کا نظام جو صبیا، بُدیع، القرفی، الخشابیہ، اور جرائبہ کے مراکز کے لیے 7,557,206 ریال کا ترقیاتی پیکج منظور کیا گیا۔ اس میں استقبالیہ دفاتر اور انتظار گاہوں کے ڈیزائن، تخلیق بچوں کے پلے رومز، بیرونی دیواروں کو ہٹانا، سبز جگہوں کا اضافہ اور آؤٹ ڈور بیٹھنے کی جگہیں بنانا اور بچوں کے لیے ایک ایریا گیمز، اس کے علاوہ سینٹر کے باہر واک وے قائم کرنا تاکہ کمیونٹی سے 24 گھنٹے اس سے فائدہ اٹھایا جا سکے۔

بچوں کے شعبہ کی ترقی

ان منصوبوں میں پرنس محمد بن ناصر اسپتال میں 2,376,176 ریال کی رقم سے شعبہ اطفال کی ترقی بھی شامل ہے۔ جہاں اس شعبے میں 26 بستر شامل ہیں ۔ اسے جدید ترین معیارات کے مطابق تیار کیا گیا ہے اور جدید ترین آلات فراہم کیے گئے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں