خاتون کو اسکارف نہ پہننے پرلاٹھی مارنے والے ایرانی مولانا کی پگڑی پاوں تلے روند ڈالی‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

اسلامی جمہوریہ ایران میں حکمران طبقے کی طرف سے خواتین پر اسکارف مسلط کرنے سے متعلق خبریں میڈٰیا کی توجہ کا مرکز رہتی ہیں۔ حال ہی میں اس حوالے سے ایک دلچسپ ویڈیو سامنے آئی جس میں ایرانی ملاؤں کی طرف سے اسکارف پہننے اور حجاب کی پابندی کرانے کے خلاف عوامی رد عمل کی عکاسی ہوتی ہے۔

ایرانی کارکن مسیح علی نژاد نے ایک ویڈیو کلپ شائع کیا جس میں قم میں ایک ایرانی ملا کو ایک خاتون کو سر پر اسکارف پہننے کا مشورہ دینے کے بعد سر پر ڈنڈے سے مارتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔

خاتون نے جواب میں ان مولانا صاحب کی پگڑی ان کے سر سے اتار کر سڑک پر پھینک دی اور اسے پاؤں تلے روند دیا گیا۔

ایرانی رجیم کے مخالف "ایران انٹرنیشنل" چینل کو ایک اور زاویے سے موصول ہونے والی ویڈیو کلپ میں دکھایا گیا ہے کہ بھاگتے ہوئے مولانا کی پگڑی گر گئی۔

سنہ 1979 میں ہونے والے مذہبی انقلاب نے خواتین میں بڑی تبدیلیاں لائیں اور خواتین کے لباس اور سر ڈھانپنے پر توجہ مرکوز کی۔ انقلاب کے بعد ایرانی حکام نے تمام خواتین کو نقاب پہننے کا پابند کیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں