سعودی عرب کے شہرطائف میں موسم سرما کے غروب آفتاب کے دلکش مناظر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کے ایک فوٹو جرنلسٹ نے مغربی سعودی عرب کے شہر طائف میں مشہور ہدیٰ پہاڑ کی چوٹیوں پر سطح سمندر سے 2,000 مربع میٹر کی بلندی سے موسم سرما کے غروب آفتاب کے جادوئی مناظر کی عکس بندی کی ہے۔ سوشل میڈیا پر پوسٹ کی گئی ان تصاویر کو صارفین کی طرف سے غیرمعمولی طور پرسراہا گیا۔

فوٹوگرافر علی الشدوی نے ان مناظر کو دلکش تخلیقی پینٹنگز میں تبدیل کیا اور سورج کے غائب ہونے کے لمحات میں دلوں کو موہ لینے والے مناظر کو پینٹ کرکے ناظرین سے داد تحسین وصول کی۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو کے دوران الشدوی نے کہا کہ میں نے طائف کے الہدیٰ پہاڑوں سے جو تصاویر کھینچی ہیں ان میں سورج کے غروب ہونے کے منظر پر فوکس کیا گیا۔

اس کا کہنا تھا کہ جبل الھدیٰ تک پہنچنے کے لیے اس نے الکور۔ الہدیٰ روڈ کے ذریعے سفر کیا۔ دوران سفر اس نے مختلف مقامات کی دلکش تصاویر حاصل کیں۔ یہ مناظر غروب آفتاب اور دن کے الوداع اور رات کی آمد آمد کے مناظر پر مشتمل ہیں۔

الشدوی کا کہنا تھا کہ موسم سرما کے دوران جبل ھدیٰ کے پہاڑوں کے اپنے منفرد مناظر ہوتے ہیں۔

"الکر- الہدیٰ" سڑک کو سعودی سیاحتی علاقوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔ اس کا موسم گرمیوں میں معتدل اور سردیوں میں سرد ہوتا ہے۔ یہاں سال بھر بارشیں ہوتی رہتی ہیں۔

درایں اثنا سعودی چیمبرز میں لاجسٹک کمیٹی کے ایک ماہر الرویزن نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ کرا روڈ جسے سعودی عرب کی پہاڑی سڑکوں میں سے ایک ہے جسے سعودی عرب نے مختلف مراحل میں مکمل کیا ہے۔ یہ سڑک مکہ معظمہ سے عرفات تک 21 کلو میٹر، عرفات سے الکرا تک 23 کلو میٹر اور کرا سے ہدیٰ تک 23 کلو میٹر جب کہ الھدا سے طائف تک 20 کلومیٹر ہے۔ اس سڑک کی مجموعی لمبائی 80 کلو میٹر ہے۔ الھدا اور طائف کے درمیان یہ سڑک مکمل پہاڑوں کے اندر سے گذرتی ہے اور یہ اس شاہراہ کا مشکل ترین مرحلہ ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ الکر - الہدا روڈ کو سب سے مشہور خم دار سڑکوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے جو پہاڑوں اور اس کے سرپل موڑ کے درمیان دھند کے ماحول کو چھونے کے لیے مشہور ہے۔ یہ ایک قدم راستے پر بنائی گئی ہے جس کی تاریخ 900 سال پرانی بتائی جاتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں