سعودی معیشت

سعودی صنعتی شہروں میں پائیدار ترقی کے اہداف کوکیسے مقامی بنایا گیا؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کی اتھارٹی برائے ’انڈسٹریل سٹیز اینڈ ٹیکنالوجی زونز "مدن" نے عوامی اور نجی شعبوں کے اشتراک سے اقوام متحدہ کے 17 پائیدار ترقیاتی اہداف میں سے 13 کو مقامی بنانے میں اپنی کامیابی کا انکشاف کیا ہے۔

مارکیٹنگ اور کارپوریٹ کمیونیکیشن ڈیپارٹمنٹ کے ڈائریکٹر اور سرکاری ترجمان قصی العبدالکریم نے تصدیق کی کہ ’مدن‘ نے سعودی ویژن 2030 کے مقاصد کے حصول میں اپنے اہم کردار اور قومی صنعتی ترقی اور لاجسٹکس پروگرام میں اس کو سونپے گئے اقدامات کی بنیاد پر " ندلب" دنیا کے لیے مملکت کے کھلے پن کی حمایت کرنے میں تعاون کرتا ہے کیونکہ گروپ آف ٹوئنٹی "G20" کے ایک فعال رکن کے طور پر عالمی اقتصادی پالیسیاں بنانے میں ایک بااثر فریق کے طور پر ابھر رہا ہے۔

انہوں نے وضاحت کی کہ ’مدن‘ پائیدار ترقی کے 17 سے 13 اہداف حاصل کرنے میں کامیاب رہا ہے جو براہ راست اس کی ترقی اور سرمایہ کاری کی سرگرمیوں سے متعلق ہیں۔ یہ اہداف 2015 کے دوران عالمی سطح پر اپنائے گئے تھے، جن کا باضابطہ طور پر 20 نومبر 2020 کو نفاذ کیا گیا۔ ان اہداف میں غربت کا خاتمہ۔ مکمل طور پر بھوک کا خاتمہ، اچھی صحت اور بہبود، معیاری تعلیم صنفی مساوات، صاف پانی اور صفائی ستھرائی صاف اور سستی توانائی، باوقار ملازمتیں، اقتصادی اور صنعتی ترقی، جدت اور بنیادی ڈھانچہ عدم مساوات کو کم کرنا اور دیگر اہداف شامل ہیں۔

عبدالکریم نے انکشاف کیا کہ مدن کے حاصل کردہ براہ راست اہداف میں معقول کام اور اقتصادی ترقی، اہداف کے حصول کے لیے شراکت داری، پائیدار شہر اور کمیونٹیز، صاف پانی اور صفائی، صنعت، جدت اور بنیادی ڈھانچہ، موسمیاتی کارروائی، ذمہ دارانہ کھپت اور پیداوار، صاف ستھرا اور سستی توانائی، اچھی صحت اور بہبود، صنفی مساوات، عدم مساوات میں کمی، معیاری تعلیم، اور جنگلات کا تحفظ جیسےاہداف ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ معقول کام اور معیشت کی نمو کے ساتھ ساتھ اہداف کے حصول کے لیے شراکت داری مدن کی صنعت کو بااختیار بنانے اور سعودی ویژن 2030 کے مطابق مقامی مواد کو بڑھانے میں تعاون کرنے کی حکمت عملی کے اہم محور ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں