اسرائیل میں مار گرائے جانے والے حزب اللہ کے ڈرونز کے رازبے نقاب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل کی جانب سے گذشتہ منگل کو اعلان کیا گیا کہ اس نے حزب اللہ کا ایک ڈرون مار گرایا ہے۔ کل جمعہ کو انکشاف کیا کہ اس میں حزب اللہ کے کچھ رہ نماؤں اور ارکان کے چہروں کی تصاویر کی شناخت کی ہے۔

فوج کے ترجمان افیحائی ادرعی نےاپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر ایک ٹویٹ میں وضاحت کی کہ ڈرون نے حزب اللہ کے ارکان کی ڈرون استعمال کرنے کی تکنیک کی تربیت کی مشق کی تصاویر لی تھیں، جس میں اس کے چلانے والوں کے چہرے دکھائے گئے تھے۔

انہوں نے مزید کہا کہ نام نہاد اسرائیلی "جلیل ڈویژن" نے حالیہ مہینوں میں ڈرونز کی سمت میں حزب اللہ کی سرگرمیوں پر نظر رکھنے کا انتظام کیا تھا۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ اس خصوصی ڈویژن نے اسرائیل کی طرف سرحد عبور کرنے کے بعد ڈرونز کی نگرانی کے لیے فوج کی صلاحیتوں کو مضبوط کیا ہے۔ گذشتہ مہینوں کے دوران مار گرائے جانے والے ڈرون طیاروں کی تعداد میں نمایاں اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔

قابل ذکر ہے کہ ادرعی نے 4 جنوری کو اعلان کیا تھا کہ اسرائیلی فورسز نے دونوں ممالک کی سرحد پر حزب اللہ کا ایک ڈرون مار گرایا ہے۔ اس نے اس وقت مزید کہا کہ ڈرون لبنان کے اندر سے سرحد پار کر گیا جس کے بعد اس کا تعاقب کرکے اسے مار گرایا گیا۔

اسرائیلی فضائیہ کے نئے کمانڈر ٹومر بار نے گذشتہ ہفتے دھمکی دی تھی کہ اگر حزب اللہ نے تل ابیب پر حملہ کیا تو اس کے خلاف پرتشدد حملے کریں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں