شام میں حزب اللہ اور ایران کے حوالے سے اسرائیل کا منصوبہ کیا ہے ؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیل میں ملٹری سیکورٹی ادارے نے شمالی علاقے میں طاقت کے توازن کے معاملے کو سال 2022ء کے اہداف میں سرفہرست رکھا ہے۔ اس مقصد کے لیے "حزب اللہ" اور "ایران" کے عناصر کو سرحدی علاقے سے بالخصوص شام میں دور کیا جائے گا۔

اسرائیلی فوج شمالی علاقے میں حزب اللہ اور شام کی سمت سے ایران کے خلاف متوقع جنگ کے مختلف منظر ناموں سے نمٹنے کے لیے تربیتی مشقیں انجام دے رہی ہے۔ الجلیل میں سرحد کے نزدیک حزب اللہ کی سرگرمیوں پر نظر رکھنے کے لیے ایک اسپیشل ٹیم تشکیل دی گئی ہے۔

اسرائیلی عسکری قیادت فوج کو اس بات کی تربیت دے رہی ہے کہ حزب اللہ کی جانب سے بھیجے گئے جاسوس ڈرون طیارے سرحد سے دور علاقوں تک پہنچنے کی صورت میں فوری طور پر جوابی کارروائی عمل میں لائی جائے۔

اسرائیلی فوج کی ایک رپورٹ میں اس بات کو خوش آئند قرار دیا گیا ہے کہ اسرائیلی فضاؤں میں داخل ہونے والے ایک ڈرون طیارے کو مار گرایا گیا۔ بعد ازاں یہ انکشاف ہوا کہ طیارے نے بعض مقامات کی تصاویر لے لی تھیں۔ اسرائیلی فوج کی رپورٹ کے مطابق حزب اللہ اور ایران کے عناصر نے ڈرون طیاروں کو انٹیلی جنس معلومات جمع کرنے کے لیے استعمال نہیں کیا بلکہ فضا سے دھماکا خیز مواد اور دستی بموں کو گرانے کے واسطے استعمال کیا۔

اسرائیلی فوج کے نزدیک گذشتہ برسوں کے دوران میں حزب اللہ نے ڈرون طیاروں کے استعمال میں ایک بڑی پیش رفت کو یقینی بنایا ہے۔ اس عرصے میں اسرائیل کے ساتھ لبنانی سرحد پر ڈرون طیاروں کی اڑان کی شناخت کی گئی۔ اسرائیلی فوج نے ڈرون سے متعلق حزب اللہ کی سرگرمیوں کا جائزہ لینے کے لیے ڈیڑھ برس قبل فضائی نگرانی کا ایک نظام قائم کیا تھا۔

اسرائیلی فوج کے اعلان کے مطابق وہ دو برس میں شام کی سمت سیکڑوں زمینی خفیہ عسکری کارروائیاں کرنے اور جدید میزائلوں کے داغنے میں کامیاب رہی۔ ان کا مقصد مذکورہ علاقے سے ایران اور حزب اللہ کے عناصر کو دور کرنا ہے۔

سال 2022ء کے دوران میں متوقع منظر ناموں کے لیے اسرائیلی سیکورٹی جائزے میں تسلیم کیا گیا ہے کہ اسرائیل ،،، شام پر بم باری سے اپنا مقصد پورا نہیں کر سکا۔

جائزے کے مطابق شام کے صدر بشار الاسد ایک دوراہے پر کھڑے ہیں جہاں ان کے پاس شام کی تعمیر نو اور یا پھر ایرانیوں کو مطلقا سپورٹ جاری رکھنے کے راستے ہیں تا کہ تہران خطے میں اپنے منصوبے کو تکمیل کا جامہ پہنا سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں