.

تصاویر: موسم سرما میں مکہ کلاک ٹاور کیسا دکھتا ہے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مکہ معظمہ کے موسم سرما کے ماحول کے ساتھ مکہ کلاک ٹاور کا ایک خاص تعلق ہے۔ یہ ٹاور اپنی خوبصورتی اور اپنی اونچائی کے لیے مشہور ہے۔فوٹو گرافی کےشوقین حضرات اس کے خوبصورت مناظر کو اپنے کیمروں میں محفوظ بنانےکے لیے دوڑے چلے آتے ہیں۔خاص طور پر مسجد حرام اور کعبہ کے نظارے فوٹو گرافروں کی توجہ کا خاص مرکز ہوتے ہیں۔

فوٹوگرافر حسین بن حسن نے ایک جمالیاتی پینٹنگ دکھانے میں شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا جس میں تخلیقی صلاحیتوں کے معانی کو مجسم کیا گیا۔ اس نے مکہ کے کلاک ٹاور کی تصاویر سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر پوسٹ کیں جنہیں غیرمعمولی پیمانے پر سراہا گیا۔

فوٹوگرافر حسین نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا مکہ گھڑیال اپنی تمام تر تفصیلات اور خوبصورتی کے ساتھ مجھے اپنی طرف متوجہ کرتا ہے۔ اس کے ڈیزائن، رنگوں کی خوبصورتی، اسے چاروں اطراف سے دیکھنا میرے لیے کشش رکھتا ہے اور میں سال میں بار بار اس کی تصاویر لیتا رہتا ہوں تاکہ لوگ بار بار اس کے نظاروں سے لطف اٹھاتے رہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ میں نے 2013 سے فوٹوگرافی شروع کی ہے۔ میں مکہ المکرمہ کی عمومی طور پر تصویر کشی کرتا ہوں اور مکہ مکرمہ کے پہاڑوں، اس کی سڑکوں کی فوٹو گرافی اور ویڈیو کے کئی تربیتی کورسز میں شرکت کرتا ہوں، جس کے ذریعے میں فوٹو گرافی میں اعلیٰ مہارتیں حاصل کرچکا ہوں۔

انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ تصویر اس جگہ کی حقیقت کو پہنچانے اور اسے جمالیاتی احساس کے ساتھ آرکائیو کرنے میں ایک زندہ دستاویز ہے۔ یہ کہ فوٹو گرافی آنکھ کی جھلک، تخلیقی سوچ ،تکنیکی اور علمی صلاحیت کا مرکب ہے، جو انہیں ایک تصویر میں تبدیل کرتی ہے۔

دُنیا کی سب سے بڑی گھڑی

قابل ذکر ہے کہ مکہ گھڑیال دنیا کی سب سے بڑی گھڑیوں میں سے ایک ہے اور اسے پہلی بار رمضان المبارک کے بابرکت مہینے میں 2008ء میں چلایا گیا تھا۔

یہ گھڑی دنیا کی سب سے لمبی گھڑی بھی ہے جس کی لمبائی 40 میٹر اور اونچائی 400 میٹر ہے۔ کلاک ٹاور میں نصب کلاک چار سمتوں سے دکھائی دیتی ہے۔ سامنے سے یہ اس گھڑی کی لمبائی 43 میٹر اورعرض 39میٹر ہے۔ دنیا کی اس منفرد گھڑی کا وزن 36 ہزار ٹن ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں