.
جوہری ایران

کیا ایران نے نطنز پلانٹ سے زیادہ گہرائی میں پلانٹ بنا لیے ہیں؟

امریکی رپورٹ میں ایران کی بم پروف نئی تنصیبات کی تیاری کا انکشاف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

انسٹی ٹیوٹ فار سائنس اینڈ انٹرنیشنل سیکیورٹی کی ایک نئی رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ ایران میں نیا نطنز زیر زمین کمپلیکس جو کہ یورینیم کی افزودگی کی مرکزی جگہ کے جنوب میں پہاڑی علاقے میں واقع ہے میں ایسے ہال شامل ہیں جو فردو یورینیم افزودگی کی جگہ سے بھی گہرے ہیں۔

نئی رپورٹ کے مطابق دونوں سہولیات نطنز کے مرکزی مقام سے کہیں زیادہ گہری زیرزمین ہیں۔

پہاڑ کی جسامت کو دیکھتے ہوئے نئے زیر زمین کمپلیکس میں ایران سینٹری فیوجز اسمبلی سینٹر (ICAC) سے بھی بہت بڑا اور وسیع ہے۔ پرانے مرکز کو جولائی 2020 میں تباہ کردیا گیا تھا۔ جس کے بعد اس کے متبادل کے طورپر زیر زمین یہ مرکز قائم کیا گیا ہے۔

زیر زمین کمپلیکس کا ممکنہ سائز ان امکانات کے بارے میں سوالات اٹھاتا ہے جو نیا کمپلیکس فراہم کرے گا۔

ایک مغربی انٹیلی جنس اہلکار نے حال ہی میں کہا ہے کہ اس بات پر یقین کرنے کی معقول وجہ ہے کہ زیر زمین نطنز سائٹ پر افزودگی کا پلانٹ بنایا جا رہا ہے اور اس نے ایک اور گفتگو میں اس دعوے کا اعادہ کیا۔

انسٹی ٹیوٹ آزادانہ طور پر اس کی تصدیق نہیں کر سکا ہے لیکن ایک نئے افزودگی پلانٹ کی تعمیر یقینی طور پر نئی سائٹ کے لیے سب سے زیادہ پریشان کن امکان ہے۔

خفیہ جوہری تنصیبات کی تعمیر کے ایران کے ریکارڈ کو دیکھتے ہوئے اس بارے میں مزید وضاحت حاصل کرنا کہ ایران نئے زیر زمین نطنز سائٹ پر کیا کرنا چاہتا ہے IAEA اور اس میں شامل تمام ممالک کے لیے ترجیح ہونی چاہیے۔

اگرایران افزودگی کا پلانٹ بنا رہا ہے اور اس نے بین الاقوامی ایٹمی توانائی ایجنسی کو اس کا نہیں بتایا تو یہ دونوں فریقوں کے درمیان طے پانے والے معاہدوں کی سنگین خلاف ورزی ہوگی۔

مرکزی سینٹری فیوج پلانٹ کی تخریب کے بعد نئے زیر زمین کمپلیکس کی تعمیر ایران کی ترجیح تھی۔ ایران کی ایٹمی توانائی کی تنظیم (AEOI) کے اس وقت کے سربراہ علی اکبر صالحی نے اپریل 2021 میں کہا کہ ہم اپنے تمام حساس ہالز کو نطنز کے قریب پہاڑ کے قلب میں منتقل کرنے کے لیے 24/7 کام کر رہے ہیں۔ ابھی تک 18 ماہ بعد یہ سہولت تک مکمل نہیں ہوئی ہے۔ صالحی نے کہا کہ وہ امید کرتے ہیں کہ اگلے سال تک ہال تیار ہو جائیں گے تاکہ ہم ان سہولیات کو وہاں منتقل کر سکیں۔ یہ ابھی تک معلوم نہیں ہے کہ آیا نئی سائٹ 2022 میں آپریشن کے لیے تیار ہو جائے گی۔

رپورٹ کے مطابق ایران نے عوامی سطح پر نئے کمپلیکس کے بارے میں زیادہ معلومات فراہم نہیں کی ہیں۔ تاہم، اس کے ممکنہ سائز اور گہرائی سے ظاہر ہوتا ہے کہ نئے کمپلیکس میں یورینیم کی افزودگی کی سہولت اور ممکنہ طور پر مزید سرگرمیاں ہوں گی،جن میں سے سبھی کو فردو سائٹ پر زیر زمین افزودگی پلانٹ سے ملتے جلتے یا اس سے بھی زیادہ تحفظ سے فائدہ ہوگا۔

مرکزی پہاڑ کی اونچائی جس میں نیا نطنز ٹنل کمپلیکس واقع ہے سطح سمندر سے 1608 میٹربلندی پر ہے۔ اس کے مقابلے میں وہ پہاڑ جس میں فردو افزودگی کا پلانٹ موجود ہے تقریباً 960 میٹر اونچا ہے جس سے نطنز ماؤنٹین 650 میٹر اونچا ہے، یافردو سے 50% زیادہ ہے جو کسی بھی تنصیب کو زیادہ تحفظ فراہم کرسکتا ہے۔

فردو کمپلیکس کو پہلے ہی دیکھا جا رہا ہے کہ فضائی حملے سے تباہ ہونے کے لیے بہت گہرا ہے، اور اب نئی نطنز سائٹ کو تباہ کرنا اور بھی مشکل ہو سکتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں