عراق کے خام تیل کی مانگ میں اضافہ،مارچ کےلیے ترسیل کا شیڈول تیار

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عراق کے تیل کی مارکیٹنگ کے سرکاری ادارے نے عالمی مارکیٹ میں خام تیل کی زبردست مانگ کے پیش نظرمارچ میں پیداوارکی ترسیل کا شیڈول پہلے سے طے کرلیا ہے اور اس کے مطابق خام تیل برآمدکیا جائے گا۔

اسٹیٹ آرگنائزیشن برائے تیل مارکیٹنگ (ایس او ایم او) کے نائب سربراہ علی نزار نے اتوار کے روز صحافیوں سے گفتگو میں کہا کہ ابھی یہ کہنا قبل از وقت ہوگا کہ عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتیں 100 ڈالر فی بیرل سے تجاوز کریں گی یا نہیں۔ البتہ کچھ تجزیہ کاروں نے قیمتوں میں اضافے کی پیشین گوئی کی ہے۔

گذشتہ بدھ کے روز عالمی مارکیٹ میں تیل کی قیمتیں 89 ڈالر فی بیرل سے کچھ اوپر سات سال کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی تھیں۔ علی نزارنے کہاکہ قیمتوں میں کوئی اضافہ حتمی یا آخری نہیں ہو گا۔تاہم پیٹرولیم برآمد کنندگان ممالک کی تنظیم (اوپیک) قیمتوں میں موجودہ اتارچڑھاؤ کو مدنظر رکھے ہوئے ہے۔

اوپیک اور روس سمیت اتحادیوں پر مشتمل تیل پیدا کرنے والے ممالک کا گروپ اوپیک پلس پیداوار میں ماہانہ 4لاکھ بیرل یومیہ کا اضافہ کرنا چاہتا ہے لیکن جنوری میں اوپیک کی ماہانہ رپورٹ کے مطابق پیداوارمیں اس سے بھی کم اضافہ ہوا ہے کیونکہ بعض ممالک اپنی یومیہ پیداوار میں اضافے کے لیے کوشاں ہیں۔

علی نزارکا کہنا تھا کہ عالمی مارکیٹ کو اضافی مقدار میں تیل کی ضرورت پڑسکتی ہے اور اس صورت میں اوپیک پلس مارکیٹ کومزید پیش کش کرے گا۔انھوں نے مزید بتایا کہ فروری میں عراق کی تیل کی اوسط برآمدات بڑھ کر33 لاکھ بیرل یومیہ تک پہنچنے کا امکان ہے۔جنوری میں ان کا حجم 32 لاکھ بیرل یومیہ ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں