سعودی وزیر ماحولیات کا ملک میں پانی کی ضروریات کے خلا کو کم کرنے کا عزم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب میں ماحولیات، پانی اور زراعت کے وزیر، نیشنل واٹرنگ کارپوریشن (سقایا) کے بورڈ آف ٹرسٹیز کے چیئرمین انجینیر عبدالرحمٰن الفضلی نے کہا ہے کہ پانی کی پائیدار فراہمی فوری مسائل اور درپیش بڑے چیلنجوں میں سے ایک ہے۔ آج ہماری دنیا میں انسان جہاں آبادی میں اضافے کے چیلنج سے نبرد آزما ہیں وہیں پانی کی کھپت کی شرح مسلسل بڑھ رہی ہے۔ اگرچہ استعمال کے طریقوں میں تبدیلی آ رہی ہے اور ترقیاتی منصوبوں پر بھی کام جاری ہے مگر پانی کی قلت ایک اہم مسئلہ ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ موسمیاتی تبدیلیوں کے ساتھ یہ صورتحال مشکل ہوتی جا رہی ہے جس سے 2050 تک دنیا کی تقریباً 52 فیصد آبادی کی بنیادی ضروریات کے لیے ضروری پانی کی دستیابی کو خطرہ لاحق ہے۔

سعودی وزیر ماحولیات ان خیالات کا اظہار "فرسٹ فورم فار چیریٹیبل ورک ان واٹرنگ" کے موقع پر خطاب میں کیا۔ یہ تقریب کل سوموار کوریاض میں " مواقع اور چیلنجز" کے عنوان کے تحت منعقد کی گئی تھی جس کا اہتمام الاھلیہ واٹرنگ کمپنی (سقایہ) نے وزارت ماحولیات پانی وزراعت کے تعاون سے کیا تھا۔

الفضلی نے وضاحت کی کہ پانی میں خیراتی کاموں کا پہلا فورم مخیر حضرات اور عطیہ دہندگان کو مواقع فراہم کرکے کمیونٹی کی فعال شرکت کا ایک نیا مرحلہ قائم کرتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ یقیناً ہم ان تبدیلیوں سے الگ تھلگ نہیں ہیں، لیکن ہم اپنی پانی کی ضروریات میں فرق کو کم کرنے کے لیے تیز رفتاری اور زیادہ عزائم کے ساتھ کام کرنا چاہتے ہیں۔ ہم ان عزائم کو اقدامات اور منصوبوں میں مجسم کرنے کے خواہشمند ہیں۔ یہ منصوبے پہلے ہی لاگو کیے جا چکے ہیں یا جامع منصوبوں کے مطابق عمل میں لایا جا رہا ہے تاکہ پانی کے شعبے کی پائیداری کو یقینی بنایا جا سکے اور خادم حرمین شریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی لامحدود توجہ اور حمایت کی روشنی میں ان کی خدمات کے معیار کو بہتر بنایا جا سکے۔

انہوں نے کہا کہ عملی حل صرف ایک متوازن، مربوط اور جامع نقطہ نظر کے ذریعے ہی حاصل کیے جا سکتا ہے۔اسی لیے ہم نے انسانی وسائل اور سماجی ترقی کی وزارت کے ساتھ مل کر پانی کے شعبے میں کمیونٹی کی شرکت کے لیے ایک ادارہ جاتی فریم ورک تیار کرنے کے لیے کام کیا۔ اس کا نتیجہ یہ نکلا کہ ہم آج حکومت، نجی شعبے، اور غیر منافع بخش شعبے کے درمیان انضمام اور مشترکہ کوششوں کے تحت نیشنل واٹرنگ کارپوریشن کی شکل میں دیکھ رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں