’ماحولیاتی تحفظ کی خاطر پرندوں کی فوٹو گرافی کرتا ہوں‘

پرندوں کے دیوانے سعودی فوٹو گرافرکے تاثرات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کے ایک فوٹو گرافر اور آرٹسٹ علی احمد علی ابو القاسم نے فوٹو گرافی کے آرٹسٹک ماڈل پیش کرنے میں شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے۔ اس نے اپنی فوٹو گرافی میں جازان کے ماحول اور مملکت کے علاقوں میں انسانی زندگی پر اپنی توجہ مرکوز کی ہے۔ العربیہ ڈاٹ نیٹ کے ساتھ اپنے انٹرویو میں اس کا کہنا ہے کہ میں ماحولیاتی تحفظ کے لیے فوٹو گرافی کرتا ہوں اور پرندے میری فوٹو گرافی کا سب سے اہم موضوع ہیں۔ اس نے کہا کہ جانوروں اور پرندوں کی فوٹو گرافی کے شعبے میں میری پیشہ ورانہ مہارت کا مقصد معاشرے میں ان کی قدر بڑھانا، انہیں تحفظ فراہم کرنا اور ماحولیاتی توازن کو برقرار رکھنے کے لیے لوگوں میں پرندوں کی اہمیت کا شعور اجاگر کرنا ہے۔

سب سے مشکل شاٹ

ابو القاسم نے "العربیہ ڈاٹ نیٹ" کے ساتھ گفتگو کے دوران بتایا کہ اسے نوے کی دہائی میں بچپن سے ہی فوٹو گرافی کا شوق تھا۔ تب اس کے پاس ایک کوڈک کیمرہ تھا۔ وہ اس کیمرے کی مدد سے اپنے آبائی محلے میں لوگوں کی زندگی اور بودو باش کی تصاویر بناتا اور زندگی کے مختلف پہلوؤں کو تصویر کی زبان میں محفوظ کرتا۔ یہ اس کا فوٹو گرافی کی دنیا میں باقاعدہ قدم رکھنے کا آغاز تھا۔ اس کے بعد اس نے جب پیشہ وارانہ فوٹو گرافی شروع کی تو اس کے پاس ڈیجیٹیل کیمرہ بھی آگیا۔ اس نے بتایا کہ پرندوں کی دنیا میں متاثر کن شاٹ پکڑنا فوٹو گرافی کے میدان میں سب سے مشکل کام ہے۔ اس نے اسے 2011 میں کچھ دوستوں کی مدد سے اس فیلڈ میں آنے کا فیصلہ کیا۔ انہوں نے تربیت اور علم کے ساتھ اس کے نقطہ نظر کی حمایت کی اور اسے پرندوں کی فوٹو گرافی میں ایک پیشہ ور بننے کا باعث بنا۔

شاٹ کے لیے مشکل لمحات

علی ابو القاسم ان اچھوتے شاٹس کی طرف مائل ہیں جو انسانی زندگی اور اس کی زندہ رہنے کی جدوجہد کو بیان کرتے ہیں۔ اس کا کہنا ہے کہ مشکل شاٹس اس کے کام کی قدر اور اہمیت کو بڑھاتے ہیں۔ اس لیے وہ کم سن پرندوں کو دانا دنکا چگانے، گھونسلے کا دفاع کرنے، پر پھڑپھڑانے کے منظر کی تصویر کشتی کرتے ہیں۔فوٹو گرافر کا کہنا ہے کہ اے الو سے محبت ہے۔ اس کے خیال میں الو سب سےخوبصورت پرندہ ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں