میں نے 100 ایرانی ذمے داران کو جال میں پھنسایا : اسرائیلی خاتون جاسوس کا اعتراف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی خاتون جاسوس کیتھرین پیریز شکدم ایرانی حکومتی ذرائع ابلاغ میں کام کے عرصے کے دوران میں بعض ایرانی ذمے داران کے اسکینڈلوں کو بے نقاب کرتی ہیں۔ ان ذرائع ابلاغ میں ایرانی پاسداران انقلاب کے زیر انتظام "تسنیم" نیوز ایجنسی اور ایرانی رہبر اعلی علی خامنہ ای کی ویب سائٹ شامل ہے۔

اسرائیلی اخبار " ٹائمز آف اسرائیل" کے مطابق کیتھرین نے انکشاف کیا کہ اس نے جنسی تعلقات قائم کرنے کا لالچ دے کر 100 ایرانی ذمے داران کو اپنے جال میں پھنسایا۔ کیتھرین نے واضح کیا کہ ایرانی مذہبی شخصیات جن کو اس نے "ملّاؤںّ" کا نام دیا ،،، معلومات کا اہم ترین ذریعہ ہیں۔ ان میں اکثریت ایران میں اہم حکومتی منصبوں پر فائز ہیں۔

کیتھرین کے مطابق اس نے مذہب کے بارے میں مزید جاننے کی خواہش ظاہر کر کے ایرانی حکومت میں شامل مذہبی شخصیات سے رابطوں کی راہ ہموار کی۔ وہ ان شخصیات کو عارضی شادی کی پیش کش بھی کرتی تھی۔ اس پیش کش اور اعتماد حاصل کر لینے کے بعد یہ شخصیات خلوت میں خود ہی کیتھرین کو مزید معلومات فراہم کر دیا کرتے تھے۔

اسرائیلی خاتون جاسوس نے مثال دیتے ہوئے ایرانی پارلیمنٹ کے ایک رکن کے بارے میں بات کی۔ اس رکن نے "قربت" کی ملاقات میں پارلیمنٹ کے خفیہ اور بند اجلاس میں ہونے والی تمام کارروائی کی معلومات اور اہم ملکی راز کیتھرین کے سامنے گوش گزار دیے۔

ادھر "تسنیم" نیوز ایجنسی کا کہنا ہے کہ ایران میں مذکورہ اسرائیلی خاتون جاسوس کے داخل ہونے میں ایجنسی کا کوئی کردار نہیں۔ ایجنسی کے مطابق یہ سیکورٹی اداروں کی ذمے داری ہے۔ کیتھرین نے اپنے بلاگ میں تحریر کیا ہے کہ وہ فرانسیسی پاسپورٹ پر ایران میں داخل ہوئی تھی۔ اس کے مطابق وہ ایک مسلمان یمنی کی بیوی تھی جس کے سبب شکوک دور ہو گئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں