سعودی عرب : دنیا کے پہلے غیر منافع بخش شہر کے منصوبے کی تفصیلات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

سعودی عرب میں محمد بن سلمان فاؤنڈیشن "مسك" نے "پرنس محمد بن سلمان سِٹی" کے منصوبے کے بارے میں تفصیلات جاری کی ہیں۔ یہ دنیا میں اپنی نوعیت کا پہلا غیر منافع بخش شہر ہو گا۔

ہفتے کے روز ٹویٹر پر فاؤنڈیشن کے بیان میں بتایا گیا کہ یہ منصوبہ دارالحکومت ریاض کے مغرب میں عرقہ کے علاقے میں تقریبا 3.4 مربع کلو میٹر کے رقبے پر واقع ہے۔ پہلے روز سے لے کر اب تک منصوبے کی فنڈنگ سعودی ولی عہد نے اپنے ذاتی مال سے کی ہے۔

شہر میں دفاتر کے لیے مختص رقبہ 3.06 لاکھ مربع میٹر سے زیادہ رقبے پر مشتمل ہے۔ توقع ہے کہ شہر میں ملازمین کی تعداد 20 ہزار ہو گی۔ اسی طرح شہر میں تقریبا 99 ہزار مربع میٹر کا رقبہ شاپنگ ، تفریح ، ریستوران اور شہر کی آبادی اور آنے والوں کے لیے مختص ہو گا۔

شہر میں متعدد مقامات پر رہائشی خدمات فراہم کی جائیں گی۔ ان میں 500 بنگلے اور ٹاؤن ہاؤس اور مختلف رقبوں کے تقریبا 6000 رہائشی اپارٹمنٹس ہوں گے۔

توقع ہے کہ شہر کی آبادی 18 ہزار افراد کے قریب ہو گی۔

یاد رہے کہ شہر کو اس طریقے سے ڈیزائن کیا گیا ہے کہ یہ راہ گیر دوست ہو۔ شہر کے مجموعی رقبے میں 44% سے زیادہ حصہ کھلے سبز علاقے کے طور پر مختص کیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں