ایرانی ملیشیا

امریکی قومی سلامتی کے سابق مشیر جان بولٹن کو قتل کرنے کی ایرانی سازش کا انکشاف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

امریکی ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ سابق قومی سلامتی کے مشیر جان بولٹن کو قتل کرنے کے لیے ایرانی پاسداران انقلاب نے سازش تیار کی تھی۔ وزارت انصاف کے ایک اہلکار جو تحقیقات پر مامور ہیں کا کہنا ہے کہ ایرانی پاسداران انقلاب کی قدس فورس سے وابستہ کم از کم دو ایرانی اس کارروائی کو انجام دینے کی منصوبہ بندی کر رہے ہیں۔ وزارت انصاف کا ایک اہلکار جو تحقیقات سے واقف ہے۔

ذرائع نے واشنگٹن ایگزامینر کو بتایا کہ محکمے کے پاس ایرانیوں کے خلاف ثبوت موجود ہیں، لیکن بائیڈن انتظامیہ کے اہلکاران افراد کے خلاف عوامی الزامات کی مزاحمت اس خوف سے کر رہے ہیں کہ ایسا کرنے سے ایران کے ساتھ جوہری معاہدے تک پہنچنے کی ان کی کوششوں کو پٹڑی سے اتار دیا جائے گا، جو اس وقت تکمیل کے قریب ہے۔ آسٹریا میں ویانا مذاکرات میں بائیڈن ایران کے ساتھ 2015 کے جوہری معاہدے کو بحال کرنے کی امید رکھتے ہیں جس سے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے دستبرداری اختیار کر لی تھی اور ایران نے اپنی وابستگی کو معطل کر دیا تھا۔

بلا تاخیر اعلانیہ الزام

یہ ممکن ہے لیکن امکان نہیں ہے کہ آپریشن میں ملوث افراد کے خلاف فردِ جرم عائد کی جائے۔ وزارتِ انصاف کے ایک ذریعے نے بتایا کہ سازش کی سنگینی اور شواہد نے بغیر کسی تاخیر کے اعلانیہ فردِ جرم کا جواز پیش کیا ہے۔

واشنگٹن کے ایگزامینرنے قومی سلامتی کی بنیاد پر بولٹن کے خلاف سازش کی کچھ تفصیلات کو روک دیا ہے لیکن محکمہ انصاف کے ایک ذریعہ نے اسے انتہائی مخصوص الفاظ میں بیان کیا ہے جس کی حمایت ایرانی پاسداران انقلاب کی القدس کونسل کی اہم جاسوسی سرگرمی سے ملی ہے اور اس میں امریکی سرزمین پر ایک قاتل کو بھرتی کرنے کی کوشش بھی شامل ہے۔

انٹیلی جنس کمیونٹی کو ابتدائی مرحلے میں ہی اس سازش کے بارے میں علم ہوا جس نے ایک اعلیٰ سطحی ردعمل کا اظہار کیا اور اس سال کے شروع میں یا 2021 کے آخر میں ایک کل وقتی سیکرٹ سروس اسکارٹ کو بولٹن کے پاس بھیج دیا گیا۔ FBI کے اہم اثاثوں کو بھی منصوبے میں خلل ڈالنے کے لیے تعینات کیا گیا تھا۔

یہ بھی خیال کیا جاتا ہے کہ اس سازش نے قومی سلامتی کے مشیر جیک سلیوان کی 9 جنوری کو ایران کو انتباہ دیا تھا کہ امریکا ان اہلکاروں کی حفاظت کرے گا جو اب امریکا کی خدمت کرتے ہیں اور جنہوں نے پہلے خدمت کی تھی۔

اسی طرح کی ایرانی دھمکیاں سابق وزیر خارجہ مائیک پومپیو اور ٹرمپ انتظامیہ کے دیگر سابق عہدیداروں کے خلاف بھی دی جاتی رہی ہیں جنہوں نے ایرانی مسائل پر کام کیا ہے۔واشنگٹن ایگزامینر نے دسمبر 2020 میں رپورٹ کیا کہ کانگریس نے ان ایرانی دھمکیوں کے جواب میں پومپیو کے ڈی ایس ایس حفاظتی گارڈ کو خاموشی سے ان کے حکومتی مینڈیٹ سے آگے بڑھا دیا ہے۔

فوربس میگزین نے 28 جنوری کو رپورٹ کیا کہ دارالحکومت میں بولٹن کے مضافاتی علاقوں میں خفیہ سروس کی تعیناتی نے اس کے پڑوسیوں کی توجہ حاصل کی ہے۔ انٹیلی جنس سے واقف چار فعال اور سابق سرکاری اہلکاروں نے اس بات پر زور دیا کہ بولٹن اور پومپیو کے خلاف ایرانی دھمکیاں مستقل، مخصوص اور انتہائی قابل اعتبار ہیں۔

محکمہ انصاف کے ذریعہ نے کہا کہ پراسیکیوٹرز، ایف بی آئی کے ایجنٹس اور انٹیلی جنس کمیونٹی کے ارکان جو بولٹن کے خلاف سازش کو ناکام بنانے میں پیش پیش تھے فرد جرم عائد نہ ہونے پر مایوس اور ناراض ہیں۔

اہلکار نے مزید کہا کہ بولٹن اور پومپیو سے کہا گیا تھا کہ وہ اپنے خلاف خطرات سے متعلق خفیہ معلومات شیئر کرنے کے بدلے میں نان ڈِکلوژر معاہدوں پر دستخط کریں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں