ذہنی معذور سعودی بچے کی پینٹنگ نے بین الاقوامی مقابلہ جیت لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کے علاقے ابہا میں انسٹی ٹیوٹ آف انٹلیکچوئل ایجوکیشن نے مملکت میں ایک معذور بچے کی بنائی ہوئی ایک ڈرائنگ کو آرٹ وال میں تبدیل کرکے اسے امر کردیا۔ یہ پینٹنگ اس نے کئی سال قبل تیار کی تھی جس نے شارجہ میں ہونے والے ایک مقابلے میں پہلی پوزیشن حاصل کی تھی۔

’شارجہ بینالی‘ مقابلہ جو کہ 1426 میں منعقد ہوا میں خصوصی افراد کے لیے ڈرائنگ کا مقابلہ منعقد کیا گیا۔ اس میں ابہا کے انسٹی ٹیوٹ آف انٹلیکچوئل ایجوکیشن کے استاد ماجد عسیری کے طلبہ نے حصہ لیا جنہوں نے بچپن کی تصویر کشی کی۔ ان پینٹنگز میں ایک ڈرائنگ 13 سالہ طالب علم کی طرف سے بنائی گئی تھی جو ذہنی معذوری کا شکار تھا۔

عسیری نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو مقابلہ جیتنے والی اس ڈرائنگ کی کہانی بتاتے ہوئے کہا کہ "ہم مقابلے کا اعلان کرنے کے وقت بہت تاخیر سے پہنچے اور پینٹنگز حاصل کرنے کا وقت ختم ہونے میں صرف تین دن باقی رہ گئے تھے۔"

طالب علم علی جابر میرے طالب علموں میں سے ایک تھے اور میں اس کی ڈرائنگ کی سطح اور اس کے شوق کو جانتا تھا۔ جب مجھے پینٹنگز کے حوالے کرنے کی تاریخ معلوم ہوئی تو میں نے انسٹی ٹیوٹ کے ڈائریکٹر سے کچھ طلبا (بشمول جابر) کو اپنی پینٹنگزجمع کرنے کی اجازت لی۔ آرٹ ایجوکیشن لیبارٹری میں اعلیٰ معیار کے ڈرائنگ پیپرز تقسیم کیے اور ان سے ڈرائنگ کرنے کو کہا۔ طلبا کو ہدایت کی گئی تھی کہ وہ اپنی اپنی ڈرائنگ کے پیچھے اپنا نام ،عمر اور بیماری کی نوعیت ضرور لکھیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ میں نے پینٹنگز لی اور انہیں لپیٹ دیا۔ انہیں جلدی میں شارجہ بینالی مقابلے کے لیے بھیج دیا، کیونکہ تعلیمی حوالے سے انہیں بھیجنے کا وقت نہیں تھا۔ وہ وقت پر پہنچ جائیں گے۔ کچھ دنوں بعد انسٹی ٹیوٹ کو ایک فائل موصول ہوئی جس میں تصدیق کی گئی کہ ہماری ایک پینٹنگ نے پہلا مقام حاصل کیا ہے اور یہ پینٹنگ طالب علم علی جابر کی پینٹنگ کی تھی۔

تھوڑی دیر کے بعد ابہا میں انسٹی ٹیوٹ آف انٹلیکچوئل ایجوکیشن کے ڈائریکٹر سے رابطہ کیا گیا اور طالب علم علی جابر کے بین الاقوامی بینالی کی سطح پر پہلا انعام جیتنے کی تصدیق کی گئی۔ عسیری کے مطابق پینٹنگ مقابلہ جیتنے کی سب سے اہم وجہ اس کے اور بین الاقوامی مصور پابلو پکاسو کی پینٹنگز میں سے ایک میں بہت زیادہ مماثلت تھی۔

ان سےت کہا گیا کہ وہ طالب علم کے ساتھ بچے کے والد یا اس کے نمائندے کو اعزاز کے لیے شارجہ بھیجیں۔ بچے کے والد اپنے کام کے حالات کی وجہ سے سفر کرنے سے قاصر تھے۔ اس لیے ایوارڈ اور اس کے دیگر لوازمات ابھا کو بھیجے گئے اور طالب علم، اس کے سرپرست اور انسٹی ٹیوٹ کے ڈائریکٹر کو وہاں اعزاز سے نوازا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں