اسرائیل کی سرکاری ویب گاہوں پر سائبر حملہ، سروس کئی گھنٹے معطل رہی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیل کے اعلان کے مطابق اس کی سرکاری ویب گاہوں پر اسے ایک سائبر حملہ کیا گیا ہے جس نے متعدد سرکاری ویب سائٹس بری طرح متاثر ہوئی اور کئی گھنٹوں تک ان کی سروس معطل رہی۔

نیشنل ڈائریکٹوریٹ آف سائبر سکیورٹی نے بتایا کہ "گذشتہ چند گھنٹوں میں ایک مواصلاتی نظام فراہم کنندہ پر سروس اٹیک سے انکار (DDoS) کا پتہ چلا جس نے سرکاری ویب سائٹس سمیت متعدد ویب سائٹس تک رسائی میں خلل ڈالا۔"

اس کے علاوہ ڈائریکٹوریٹ نے ٹویٹر پر کہا کہ تمام سائٹس نے اپنی سرگرمیاں دوبارہ شروع کر دی ہیں۔

اتھارٹی نے حملے کا ذریعہ نہیں بتایا جس نے نشانہ بنائی گئی ویب سائٹس تک گھنٹوں رسائی روکے رکھی۔

اگرچہ اسرائیل کے اندر اسرائیلی حکومت کی ویب سائٹ تک رسائی بحال کر دی گئی ہے لیکن "اے ایف پی" کے مطابق "نیٹ بلاکس" تنظیم، جو دنیا بھر میں انٹرنیٹ ٹریفک کی نگرانی کرتی ہے کے مطابق یہ ان سائٹس کی بین الاقوامی سطح پر رسائی نہیں ہے۔

اخبار ہارٹز کی رپورٹ کے مطابق اسرئیلی دفاعی صنعت کے ایک ذریعے نے کہا کہ یہ سائبر حملہ ملک کے خلاف اب تک کا سب سے بڑا سائبر حملہ تھا۔

اسرائیلی وزارت مواصلات نے کہا کہ اس نے "سرکاری ویب سائٹس پر بڑے پیمانے پر سائبر حملے کے تناظر میں وزارت کے ایمرجنسی ڈیپارٹمنٹ کے ساتھ صورتحال کا جائزہ لیا ہے۔"

حالیہ مہینوں میں متعدد اسرائیلی ویب سائٹس سائبر حملوں کا نشانہ بنی ہیں۔ اسرائیلی ماہرین ان حملوں کے پیچھے ایران کا ہاتھ قرار دیتے ہیں۔

اس کے برعکس تہران نے حال ہی میں امریکا اور اسرائیل پر سائبر حملہ کرنے کا الزام لگایا جس نے اس کے ایندھن کی تقسیم کا نظام درہم برہم کر دیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں