جوہری ایران

پاکستان کی طرح راز داری سے ایٹم بم بنانے میں ناکام رہے:ایرانی سیاست دان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

ایرانی پارلیمنٹ کے سابق ڈپٹی اسپیکر علی مطہری نے انکشاف کیا کہ ان کا ملک شروع سے ہی "ڈیٹرنس فورس" بنانے کے لیے جوہری بم بنانے کا ارادہ رکھتا تھا لیکن یہ رازداری برقرار رکھنے میں ناکام رہا اور بے نقاب ہو گیا۔

انقلاب کے نظریہ ساز کے فرزند آیت اللہ مرتضی مطہری نے اتوار کے روز "ایرانی اسٹوڈنٹ جرنلسٹس کلب" کے ساتھ ایک انٹرویو میں کہا کہ "ہم ایران میں ایٹم بم بنا سکتے ہیں۔ شریعت ہمیں ایٹم بم کے استعمال سے منع کرتی ہے مگر بنانے سے نہیں۔ شروع سے جب ہم نے جوہری سرگرمیاں شروع کیں تو ہمارا مقصد بم تیار کرنا اور ڈیٹرنٹ صلاحیتوں کو مضبوط بنانا تھا، لیکن ہم اس معاملے کو خفیہ رکھنے میں ناکام رہے اور ایک گروہ کی طرف سے خفیہ رپورٹس سامنے آئیں‘‘ اس گروہ کا نام مجاھدین خلق ہے اور ایرانی رکن پارلیمنٹ نے اسے ’منافق‘ قرار دیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ جو ملک پرامن ایٹمی توانائی استعمال کرنا چاہتا ہے وہ یورینیم کی افزودگی بالکل شروع نہیں کرتا بلکہ پہلے ایک ری ایکٹر بناتا ہے اور پھر افزودگی کے میدان میں چلا جاتا ہے لیکن اگر ہم براہ راست (یورینیم) افزودہ کرتے ہیں تو اس سے افزودگی بڑھ جاتی ہے۔ شبہ ہے کہ ہم بم بنانا چاہتے ہیں۔"

انہوں نے مزید کہا کہ اگر ہم پاکستان کی طرح خفیہ طور پر بم بنا کر ٹیسٹ کر سکتے تو یہ ایک بہت بڑا ڈیٹرنٹ بن جاتا۔ دوسرے ممالک جوہری طاقت کے لیے ہزار حساب لگاتے ہیں اس لیے میں سمجھتا ہوں، جب ہم نے کچھ شروع کیا، تو ہمیں اسے اختتام تک جاری رکھنا چاہیے تھا۔


عراق جنگ

مرحوم ایرانی صدر علی اکبر ہاشمی رفسنجانی نے اس سے قبل تصدیق کی تھی کہ ایران نے "عراق کے ساتھ جنگ کے دوران جوہری بم بنانے کا سوچا تھا، لیکن اس نے اس پر عمل نہیں کیا۔"

ایران عراق جنگ کے دوران ایرانی پاسداران انقلاب کے کمانڈر محسن رضائی نے حکومت کے بانی رہ نما آیت اللہ خمینی کو ایک خفیہ خط میں عراقی حملوں کو روکنے کے لیے ایران کو "لیزر ہتھیار اور ایٹمی بم" کی ضرورت کے بارے میں لکھا تھا۔

امریکا، عرب ممالک، مغربی حکومتیں اور اسرائیل ایران پر اپنے جوہری پروگرام کے مقاصد کو چھپانے کا الزام لگاتے ہیں اور بین الاقوامی جوہری توانائی ایجنسی نے اعلان کیا ہے کہ ایران ان مشتبہ مقامات کے بارے میں وضاحت فراہم کرنے سے گریز کر رہا ہے، جہاں یورینیم کے آثار پائے گئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں