یمن میں ایک جامع سیاسی حل کی حمایت کرتے ہیں: سعودی عرب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

یمن میں جنگ بندی کے موقع سے فائدہ اٹھانے کی ضرورت کے بین الاقوامی مطالبات کے جلو میں یمن میں خام حرمین شریفین کے سفیر اور یمن میں تعمیر نو کے سعودی پروگرام کے سپر وائزر محمد بن سعید آل جابر نے یمن میں اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل کے خصوصی ایلچی ہانس گرنڈ برگ سے ریاض میں ملاقات کی۔

ملاقات کے دوران انہوں نے یمن میں ایک جامع سیاسی حل تک پہنچنے کے لیے اقوام متحدہ کی کوششوں کے لیے مملکت کی حمایت پر زور دیا۔

انہوں نے اقوام متحدہ کے زیر اہتمام جنگ بندی کو کامیاب بنانے کے لیے مشترکہ کوششوں پر بھی تبادلہ خیال کیا، جس کا مقصد یمن میں ایک مستقل اور جامع جنگ بندی تک پہنچنا اور سیاسی عمل کو شروع کرنا ہے۔

امداد کے لیے ترجیح اور فنڈ میں اضافہ

دوسری طرف امریکا نے یمن کے المیے کو ختم کرنے کے لیے جنگ بندی کے دوران سیاسی حل تک پہنچنے کی کوششوں پر زور دیا ہے۔

انہوں نے غیرمنافع بخش تنظیموں پر زور دیا کہ وہ یمن میں اپنے تجربات کے بارے میں آگاہی فراہم کریں اور یمن میں جاری انسانی بحران کے حل کے لیےضروری تجاویز پیش کریں۔

انہوں نے کہا کہ یمن کے معاملے میں مداخلت کی کوئی گنجائش نہیں۔ مسلسل امداد تک رسائی کے مسائل پر قابو پانے اور انسانی امداد میں اضافے کے لیے جنگ بندی کے موقع سے فائدہ اٹھانا ضروری ہے۔

خیال رہے کہ اپریل کے اوائل میں یمن میں اقوام متحدہ کی زیرنگرانی متحارب فریقین کے درمیان جنگ بندی کا اعلان کیا گیا تھا۔ جنگ بندی دو ماہ سے جاری ہے۔ اس دوران ہر طرح کی فوجی کارروائیاں روکنے اور صنعا ہوائی اڈے اور راہ داریوں کو کھولنے پر اتفاق کیا گیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں