.

ایمریٹس گروپ میں 85 ہزار ملازمین کام کر رہے ہیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مشرق وسطی میں سب سے بڑی فضائی کمپنی "ایمریٹس" کا کہنا ہے کہ سفر کی مانگ میں اضافے کے نتیجے میں اس کا خسارہ بڑی حد تک کم ہوا ہے۔ گذشتہ برس 2021ء میں اس کا مالی خسارہ 3.8 ارب درہم رہا جب کہ 2020ء میں اس کا حجم 5.5 ارب درہم تھا۔

ایمریٹس کے چیف ایگزیکٹو شیخ احمد بن سعید آل مکتوم کے مطابق 2022ء یا 2023ء میں کمپنی دوبارہ سے منافع میں آ جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ کمپنی کو متعدد چیلنجوں کا سامنا کرنا پڑا جن میں ایندھن کی قیمتوں میں اضافہ، افراطِ زر، کرونا کے نئے ویرینٹس اور عالمی سیاسی اور اقتصادی حالات شامل ہیں۔

مالی سال کے دوران میں اماراتی فضائی کمپنی نے 1.96 کروڑ مسافروں کو منتقل کیا جب کہ سابق برس اسی عرصے میں 66 لاکھ مسافروں نے ایمریٹس سے سفر کیا تھا۔

ایمریٹس کے مطابق گروپ میں کام کرنے والے ملازمین کی مجموعی تعداد 85219 ہے۔

ایمریٹس ایئرلائن اس وقت 140 مقامات کے لیے اپنی پروازیں چلا رہی ہے۔ کرونا کی وبا پھیلنے سے قبل کمپنی دنیا کے 85 ممالک میں 158 مقامات کے لیے پروازوں کی سہولت فراہم کر رہی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں