سعودی عرب امراض دل کے پیچیدہ علاج میں کسی سے پیچھے نہیں: ڈاکٹر المطیری

’امراض قلب کے پیچیدہ آپریشنز میں استعمال ہونے والے زیادہ تر آلات مملکت میں موجود ہیں‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے نیشنل گارڈ اسپتال کے کارڈیالوجی اور کیتھیٹرائزیشن کنسلٹنٹ، گلف کارڈیک کیتھیٹرائزیشن سوسائٹی کے صدر اور سعودی سائنٹیفک کونسل آف کارڈیالوجی کے صدر ڈاکٹر فواز المطیری نے کہا ہے کہ دُنیا میں امراض قلب کے پیچیدہ آپریشنز میں استعمال ہونے والے زیادہ تر آلات سعودی عرب میں موجود ہیں اور یہاں پر ایسے پچیدہ آپریشنز بھی کیے جاتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہی وہ چیز ہے جسے بین الاقوامی فورمز میں اجاگر کیا جا رہا ہے۔صرف یہی نہیں بلکہ ہمارے ڈاکٹروں کی صلاحیت بھی عالمی سطح پر تسلیم کی جا رہی ہے کیونکہ سعودی ڈاکٹر مقامی اور بین الاقوامی سطح پر پچیدہ آپریشنز کو یکساں سطح پر انجام دینے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ اس حوالے سے ہمارے لیے زیادہ اہم بات یہ ہے کہ ہمارے ڈاکٹر مریضوں کی دیکھ بھال اور انہیں مفت علاج فراہم کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے ساتھ بات کرتے ہوئے المطیری نے کہا کہ پیرس میں منعقد ہونے والی کارڈیک کیتھیٹرائزیشن میڈیکل کانفرنس دنیا کی سب سے بڑی کارڈیک کیتھیٹرائزیشن کانفرنسوں میں سے ایک ہے، جس کا مقصد تجربات کا تبادلہ کرنا اور نئی چیزوں پر تبادلہ خیال کرنا اور سال کے اختتام پر ہر سال طبی طریقوں کو تبدیل کرنے کی عالمی سفارشات مرتب کرنا ہے۔

انہوں نے توجہ دلائی کہ اس کانفرنس میں دنیا کے تمام ممالک سے 10 سے 14 ہزار افراد شرکت کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ سعودی کارڈیک کیتھیٹرائزیشن سوسائٹی کے تعاون سے ڈچ کیتھیٹر ایسوسی ایشن کے تعاون سے منعقد ہونے والے سائنسی اجلاس میں سعودی گروپ کو صدارت کرنے کا اعزاز حاصل ہوا۔

المطیری نے مزید کہا کہ مملکت ہمیشہ بین الاقوامی فورمز میں موجود رہی ہے کیونکہ مملکت اپنی موجودگی ثابت کرنے کے مرحلے پر پہنچ چکی ہے۔ مختلف طبی شعبوں میں سعودی عرب کی مہارت اور پیش رفت سے متوجہ ہوئی ہے خاص طور پر امراض قلب میں طبی کیتھیٹرائزیشن، کیڈرز اور بہت زیادہ طبی صلاحیتیں موجود ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں