امارات میں ’بندر آبلہ‘ کے تین نئے کیسز کی تصدیق

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

متحدہ عرب امارات کی وزارت صحت نے کہا ہے کہ اتوار کو ’’بندر آبلہ’‘ کے تین نئے کیسز ریکارڈ پر آئے ہیں۔

اماراتی خبر رساں ادارے ’’وام‘‘ کے مطابق وزارت صحت نے بیان میں کہا کہ’بندر آبلہ‘ متعدی مرض ہے تاہم کووڈ 19وائرس کے مقابلے میں اس کے پھیلنے کی رفتار اور دائرہ محدود ہے۔ یہ ایک انسان سے دوسرے انسان کو بہت کم لگتا ہے۔

وزارت صحت نے مقامی شہریوں اور مقیم غیر ملکیوں سے کہا کہ ’وہ سفر اور تقریبات کے دوران حفاظتی تدابیر کی پابندی کریں۔ حفظان صحت کے منافی کاموں سے گریز کریں‘۔

وزارت صحت نے بیان میں اطمینان دلایا کہ’ امارات میں’بندر آبلہ‘ کے پھیلنے کے امکانات محدود ہیں۔ حکومت نے بچاؤ کے تمام انتظامات کر رکھے ہیں۔‘

یاد رہے کہ متحدہ عرب امارات کی وزارت صحت نے منگل 24 مئی کو ملک میں ’بندر آبلہ‘ کے پہلے کیس کی تصدیق کی تھی۔

وزارت صحت نے بیان میں کہا تھا کہ ’مغربی افریقہ سے آنے والی 29 سالہ خاتون طبی معائنے کے دوران ’بندر آبلہ‘ میں مبتلا پائی گئی۔ امارات میں انتہائی نگہداشت کے شعبے میں اس کا علاج کیا جا رہا ہے‘۔

بندر آبلہ کیسا ہوتا ہے؟

وزارت صحت کے مطابق ’بندر آبلہ‘ کی نمایاں علامتوں میں بخار، شدید تھکاوٹ کا احساس، شدید درد، خارش، ایک سے تین دن تک بخار اور انفیکشن شامل ہے۔

’وائرس کی علامتیں ظاہر ہونے کے درمیان کا عام طور پر 5 سے 21 دن کا وقفہ ہوتا ہے‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں