سعودی عرب میں آتش فشاں غاروں کا دنیا کا سب سے بڑا ذخیرہ دریافت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ویسے تو آتش فشاں غاریں دنیا بھر میں پائی جاتی ہیں مگر یہ حیران کن انکشاف ہوا ہے کہ سعودی عرب میں غیر فعال آتش فشاں غاریں دنیا کی سب سے زیادہ اور غاریں ہیں جو ہزاروں سال سے موجود ہیں۔

سعودی ماہر موسمیات ڈاکٹر خالد الزعاق نے کہا کہ مملکت سعودی عرب دنیا کا سب سے بڑا علاقہ ہے جو ہزاروں سالوں سے غیر فعال آتش فشاں کے گڑھوں پر مشتمل ہے کیونکہ اس علاقے میں تقریباً 2500 آتش فشاں گڑھے ہیں۔

معاصر عزیز ’السبق‘ کی رپورٹ کے مطابق سعودی ماہر موسمیات وآثارقدیمہ ا نے مزید کہا کہ حایل کا علاقہ آتش فشاں غاروں میں گھرا ہوا ہے جو مختلف مقامات ہزاروں سال سے موجود ہیں۔

اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر ایک ویڈیو میں، الزعاق نے تصدیق کی کہ آتش فشاں کے گڑھے دو حصوں میں تقسیم ہیں۔ ایک سنگل گڑھے ہیں جن میں آتش فشاں ایک بار پھٹتا ہے۔ دوسرے وہ جن کے مرکزی حصے میں آتش فشاں وقفے وقفے سے پھٹتا رہتا ہے۔ اس طرح کے آتش فشاں گڑھے جنوب مشرقی ایشیا میں پائے جاتے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ آتش فشاں گڑھوں نے سعودی عرب میں 13 حرہ تشکیل دیے جو کہ آتش فشاں چٹانوں اور آتش فشاں پھٹنے سے سیاہ سرزمین میں تبدیل ہوگئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں