پانچ سال کی بسمہ نے سنہ 1986 میں لیڈی ڈیانا سے ملاقات پر کیا کہا؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

گذشتہ صدی کی اسی[80] کی دہائی میں آنجہانی شہزادی ڈیانا کے ساتھ ایک سعودی لڑکی کی تصویرسوشل میڈیا پر شائع ہونے کے بعد حالیہ گھنٹوں کے دوران سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹویٹر پر تہلکہ مچا رکھا ہے۔

بسمہ زہیر محمد مسعود نے ایک یادگاری تصویر شائع کی جوانہوں نے 1986 میں جدہ کی بندرگاہ کے دورے کے دوران برطانوی شہزادی ڈیانا اسپینسر کے ساتھ ملاقات میں لی تھی۔

بسمہ نے کیا کہا؟

بسمہ نے اپنے آفیشل ٹویٹر اکاؤنٹ پر تصویر کے ساتھ تبصرہ کرتے ہوئے لکھا کہ "میں اس تصویر میں دیکھی جانے والی بچی بسمہ زہیر مسعود ہوں۔ یہ میری تصویرہے اورمجھے آنجہانی لیڈی ڈیانا کے ساتھ دیکھا جاسکتا ہے۔ میری پیدائش 1981ء کی ہے۔ تب میری عمر 5 سال تھی۔ میں نے شہزادی ڈیانا اور ان کے شوہرشہزادہ چارلس کو جدہ اسلامی بندرگاہ کے دورے کے دوران گل دستہ پیش کیا تھا۔

انہوں نے مزید کہا کہ آج میں جدہ یونیورسٹی میں اسسٹنٹ پروفیسر کے طور پر کام کر رہی ہوں۔ شادی شدہ ہوں اور میرے دو بچے بھی ہیں۔ میں نے دارالحکمہ یونیورسٹی سے بیچلر کی ڈگری حاصل کی ہے۔ شہزادی ڈیانا سے ملاقات میری زندگی کے حسین لمحات میں سے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ میں نے جرمنی سے ماسٹر کی ڈگری اور برطانیہ سے ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کی ہے۔ شہزادی ڈیانا کے استقبال کی تصاویر شائع کرنے والی سعودی خاتون کا کہنا تھا کہ اس تصویرمیں ان کے والد زہیر محمد مسعود دیکھے جا سکتے ہیں جو اس وقت جدہ پورٹ کے ڈائریکٹر جنرل تھے۔ اس کے علاوہ تصویرمیں وزیر ہشام ناظر اور جدہ پورٹ کے کسٹمز ڈائریکٹر مرحوم منصور عبدالغفار بھی موجود ہیں۔

’میں نے شاہی جوڑے کو پھول پیشے کیے‘

اس تناظر میں "العربیہ ڈاٹ نیٹ" سےگفتگو انہوں نے کہا کہ "میں اس وقت کم سن تھی۔ میرے والد نے مجھے بتایا کہ میں ایک اہم شخصیت کو پھول پیش کروں گی۔ اس کے بعد ہم شہزادہ چارلس اور لیڈی ڈیانا سے ملنے جدہ بندرگاہ پر گئے۔

بسمہ نے بتایا کہ میں گلاب شہزادی ڈیانا کو پیش کیے۔ انہوں نے گلدستہ لیا اور ساتھ ہی میرے لباس کی تعریف کی اور کہا کہ تمہارے کپڑے کتنے خوبصورت ہیں۔ میں نے وہ تصاویر سنبھال کررکھی ہیں اور میرےنجی فوٹو البم میں موجود ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ میں جتنی بڑی ہوتی جاتی ہوں، اتنا ہی میں اس کردار سے منسلک ہوتی جاتی ہوں۔لیڈی ڈیانا کی المناک موت کے حادثے پر ہم سب کو بھی صدمہ پہنچا تھا۔

انہوں نے کہا کہ وہ یہ یادگاری تصاویر میں اپنے پاس رکھتی ہوں ۔ مجھے فخر ہے کہ شہزادی ڈیانا کا استقبال کرنے والوں میں میں بھی شامل تھی۔ وہ ان کی انسانیت نوازی اور لوگوں سےکی محبت کے لیے ان کی شکر گزار ہیں۔

قابل ذکر ہے کہ شہزادی ڈیانا اور شہزادہ چارلس نے نومبر 1986 میں خلیجی ریاستوں کا دورہ کیا تھا۔ اس چھ روزہ دورے کے دوران وہ سعودی عرب کے دورے پربھی آئے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں