‘کرونا وبا کے دوران سعودی عرب نے معذوروں کے لیے 64 ملین ریال کی امداد دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب نے زور دے کر کہا ہے کہ ’کوویڈ 19‘ کی وبا کے دوران مملکت نے تمام صوتی اور بصری ذرائع کا استعمال کرتے ہوئے تعلیمی شعبے میں کام کرنے والی 63 انجمنوں کے توسط سے متعدد تعلیمی اداروں، صحت اور سماجی ایجنسیوں کے ذریعے معذور افراد کی بحالی کی خدمات کی فراہمی کا سلسلہ جاری رکھا۔ معذور افراد کے بارے میں مسلسل معلومات کا حصول،ان کے حالات پر گہری نظر رکھنے اور نگہداشت کے لیے مدد کی گئی۔ اس دوران مجموعی طور پر 64 ملین ریال سے زیادہ کی رقم سے معذور افراد اور ان کے خاندانوں کی بہبود پر صرف کی گئی۔

یہ بات سعودی عرب کی جانب سے معذور افراد کے حقوق کے کنونشن کے لیے ریاستی فریقوں کی 15ویں کانفرنس میں سامنے آئی۔ کانفرنس سے سعودی عرب کے انسانی حقوق کمیشن کے نائب صدر اور کانفرنس میں شریک سعودی وفد کے سربراہ پروفیسر عبدالعزیز الخیال نے خطاب کیا۔

الخیال نے کہا کہ CoVID-19 وبائی امراض کےدوران سعودی عرب کا تجربہ کامیاب رہا اور ہم وبا سے بہتر طریقے سے نمٹنے میں کامیاب رہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ سعودی عرب ان اولین ممالک میں سے ایک ہے جس نے وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے ابتدائی تاریخ میں فعال اور احتیاطی اقدامات کیے اور اس وبا سے نمٹنے کے لیے مقامی اور بین الاقوامی تنظیموں کی مدد کرنا شروع کر دی۔

عبدالعزیز الخیال نے اس بات کی طرف توجہ مبذول کرائی کہ اس دوران سعودی عرب نے ایک اسٹریٹجک ماڈل پیش کیا ہے جس کی پیروی کرتے ہوئے شہریوں اور تمام زمروں کے رہائشیوں کے حقوق کے تحفظ میں توازن اور مساوات قائم کی گئی۔ وبائی امراض کے اثرات کو کم کرنے کے لیے موثر اقتصادی اقدامات پر عمل درآمد کیا جا گیا سکتا ہے خاص طور پر معذور افراد اور ان کی خاندان کی بہبود کے لیے ہرممکن اقدامات کیے گئے۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب کی بحران سے نمٹنے کی حکمت عملی کا نتیجہ کسی بھی مبصر کے لیے واضح ہے، کیونکہ مملکت میں معذور افراد میں کرونا کی وجہ سے ہونے والی اموات دیگر ممالک کے مقابلے میں سب سے کم ہیں۔

سعودی پریس ایجنسی "ایس پی اے" کے مطابق الخیال نے رپورٹ کیا کہ سعودی عرب نے تربیتی پروگراموں کو فعال کرنے کے لیے ویڈیو کمیونیکیشن ایپلی کیشنز کو ایکٹیویٹ کرکے وبائی امراض کے دوران معذور افراد اور ان کے خاندانوں کے لیے تربیت اور علاج کی خدمات فراہم کرنے کے لیے تکنیکی متبادلات کو بڑھانے کی کوشش کی ہے۔ان کی صحت کی ضروریات کے پیش نظر ان کی مدد کی گئی اور ان کی مالی مشکلات میں بھی ان کے ساتھ بھر پور تعاون کیا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں