.

سعودی عرب اور مصرکے درمیان 7.7 ارب ڈالرمالیت کے 14 معاہدوں پر دست خط

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب اور مصر نے 7.7 ارب ڈالرمالیت کے 14 معاہدوں اور سمجھوتوں پر دست خط کیے ہیں۔ مصر کی جنرل اتھارٹی برائے سرمایہ کاری اور فری زونز نے منگل کے روز ایک بیان میں سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے دورے کے موقع پران معاہدوں کے طے پانے کی اطلاع دی ہے۔

سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان پیر کو سہ ملکی دورے کے پہلے مرحلے میں مصر پہنچے تھے۔ وہ مصر کے بعد اردن اور ترکی کے دورے پر جائیں گے۔ شہزادہ محمد کا گذشتہ چارسال میں مصرکا یہ پانچواں دورہ ہے۔

اتھارٹی کے بیان کے مطابق دست خط شدہ معاہدوں میں سعودی عرب کی ایکوا پاور اور مصری الیکٹریسٹی ہولڈنگ کمپنی کے درمیان 1100 میگاواٹ ونڈ پاور کی پیداوار اور ترسیل کا معاہدہ شامل ہے۔

دونوں ملکوں کے درمیان قابلِ تجدید توانائی کے مزید معاہدوں کے ساتھ ساتھ پِٹرولیم مصنوعات، خوراک اور فن ٹیک کے شعبے سے متعلق سمجھوتے بھی طے پائے ہیں۔

کمپنی کے چیئرمین نے الشرق ٹی وی کو بتایا کہ دیگر معاہدوں میں مصر کی دمیاط بندرگاہ پر کثیرالمقاصد ٹرمینل کی ترقی اور سعودی عرب میں مصر کے فارکو فارماسیوٹیکلز کی جانب سے 15 کروڑ ڈالرمالیت کی لاگت سے’’فارماسیوٹیکل سٹی‘‘کا قیام شامل ہے۔

سعودی وفاق ہائے صنعت وتجارت کے مطابق اس وقت دونوں ممالک کے درمیان 150 سے زیادہ دو طرفہ معاہدے موجود ہیں۔

2021ء میں مصر اور سعودی عرب کے درمیان دوطرفہ تجارت کا حجم 54 ارب سعودی ریال (14 ارب ڈالر) تک پہنچ گیاتھا اور اس میں 2020 کے مقابلے میں 87 فی صد اضافہ ریکارڈ کیا گیا تھا۔

مصر میں 6800 سے زیادہ سعودی کمپنیوں کے ذریعے سعودی عرب کی سرمایہ کاری کا حجم 32 ارب ڈالر سے تجاوزکرگیا ہے جبکہ 800 سے زیادہ مصری کمپنیوں کے ذریعے سعودی عرب میں مصری سرمایہ کاری کی مالیت 5 ارب ڈالر ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں