آسٹریلیا میں سعودی طالب علم نے ایک بزرگ خاتون کی جان کیسے بچائی؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے ریاض کنگ فہد میڈیکل سٹی سے اسکالر شپ پر آسٹریلیا تعلم کے حصول کے لیے گئے طالب علم عبداللہ ندا العنیزی نے آسٹریلیا کے میلبورن شہر کے آسٹن اسپتال میں شفٹ مکمل کرنے کے بعد آسٹریلیا میں ایک معمر خاتون کی جان بچانے میں اس کی مدد کی جس پر اس کے اس اقدام کو غیرمعمولی طور پر سراہا جا رہا ہے۔

تفصیلات میں بتایا گیا ہے کہ طالب علم عنیزی اسپتال سے اپنی رہائش گاہ کی طرف روانہ ہوا۔ ابھی وہ پارکنگ میں تھا تو ٹخنے میں کمپاؤنڈ فریکچر ہونے کے باعث ایک معمرخاتون زمین پر پڑیں۔ اسے خون میں لت پت پڑی دیکھ کرالعنیزی کو اس کی مدد کو آنا پڑا۔

خاتون نے مدد کے لیے آواز دی تو وہاں قریب سعودی طالب عبداللہ العنیزی ہی موجود تھے۔ اُنہوں نے خاتون کی مدد کرتے ہوئے اس کے جسم سےخون کا بہاؤ روکنے کی کوشش کی اور اس کے ساتھ آنے والے اس کے پوتے سے بات کی۔ انہوں نے اسپتال کے ایمرجنسی روم کو واقعے کے بارے میں فون ر مطلع کیا

انہیں صورتحال کے بارے میں بتایا اور ایمرجنسی ٹیم کے آنے کے بعد انہوں نے صورتحال اور مریض کی جان بچانے پر سعودی طالب علم کا شکریہ ادا کیا۔

مریضہ کو ایمرجنسی ڈپارٹمنٹ میں لے جانے کے بعد عبداللہ العنیزی نے زخمی خاتون کے ساتھ آئے اس کے پوتے لودلاسا دیا جو دی کی حالت پر شدید صدمے میں رو رہا تھا۔

میلبورن کے آسٹن ہسپتال نے اسکالرشپ کے طالب علم عبد اللہ العنیزی کی طرف سے بزرگ خاتون کی فوری مدد کو اس کی بہادری قرار دیا۔ اسپتال انتظامیہ نےمریض کو بچانے اور صورت حال سے مثالی طور پر نمٹنے پر ان کا عنیزی کا شکریہ ادا کیا۔

بتایا جاتا ہے کہ العنیزی آسٹریلیا کی ڈیکن یونیورسٹی سے حال ہی میں فارغ التحصیل ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں