ایران کو جوہری ہتھیار رکھنے کی اجازت نہیں دیں گے: جی سیون

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

واشنگٹن اور تہران کے درمیان بالواسطہ بات چیت سے چند گھنٹے قبل کل منگل کو جرمنی میں منعقدہ گروپ آف سیون کے سربراہ اجلاس میں ایران کو جوہری ہتھیار حاصل کرنے سے روکنے پر زور دیا گیا اور خطے میں عدم استحکام پیدا کرنے کی ایرانی کارروائیوں کی مذمت کی گئی۔

’جی سیون‘ نے اپنےحتمی بیان میں تہران سے اپنی بیلسٹک میزائل کارروائیوں اور سمندری نیوی گیشن کے لیے خطرات کو روکنے کا بھی مطالبہ کیا۔ جی سیون گروپ نے ایران کے جوہری پروگرام کو روکنے کے لیے سفارت کاری کے طریقے کو اختیار کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔

ایران نے موقع سے فائدہ نہیں اٹھایا

سات بڑے ممالک نے کہا کہ ایران نے جوہری معاہدے کی طرف واپسی کے سفارتی موقع سے فائدہ نہیں اٹھایا۔

یہ بیان ایسے وقت سامنے آیا ہے جب گذشتہ دنوں کی انتھک یورپی کوششوں کے بعد گذشتہ مارچ سے تعطل کا شکار جوہری مذاکرات کو بحال کرنے کے لیے دوحا میں آج شام بالواسطہ امریکا ایران مذاکرات شروع ہونے کا امکان ہے۔

بالواسطہ بات چیت

امریکی محکمہ خارجہ نے کل شام پیر کو العربیہ/الحدث کےنامہ نگار کو بتایا کہ بات چیت بالواسطہ طور پر ہوگی۔

انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ واشنگٹن ویانا میں طےپائے نکات کی روشنی میں اس معاہدے کو مکمل کرنے اور اس پر عمل درآمد کے لیے تیار ہے تاکہ مشترکہ جامع منصوبہ بندی کے مکمل نفاذ کی طرف باہمی واپسی ہو۔

اضافی مطالبات سے دست بردار

امریکا نے زور دے کر کہا کہ ایران کی جوہری مذاکرات کی طرف واپسی کےساتھ اسے اپنے اضافی مطالبات کو ترک کرنے کی ضرورت ہے جو کہ "جوہری معاہدے سے باہر ہیں"۔ ان مطالبات میں ممکنہ طور پر پاسدارانِ انقلاب کو دہشت گرد تنظیموں کی فہرست سے نکالنے کا مطالبہ شامل ہے۔

دریں اثناء ایرانی وزارت خارجہ نے اعلان کیا ہے کہ چیف جوہری مذاکرات کار علی باقری کنی جوہری مذاکرات کے لیے کل دوحہ پہنچ گئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں