.

نو ماہ تک جاری رہنے والی’ھجرت نقش پائے رسول ﷺ ‘ نمائش کا افتتاح

70 سے زیادہ محققین اور فنکاروں نے 14 انٹرایکٹو اسٹیشنوں کے ذریعے نمائش کے ڈیزائن اور تیاری میں حصہ لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شاہ عبدالعزیز سینٹر فار ورلڈ کلچر (اثرا) میں پہلی نمائش "ہجرت نقش پائے رسول ﷺ " کا افتتاح کریا گیا ہے۔ یہ نمائش عصری انداز میں ہجرت کے موضوع پر تیار کی جانے والی اپنی نوعیت کی پہلی نمائش سمجھی جاتی ہے۔ اس خصوصی نمائش کو مشرقی صوبے کے گورنر شہزادہ سعود بن نایف بن عبدالعزیز کی سرپرستی اور تعاون حاصل ہے۔

نئےاسلامی سال کے آغاز کے ساتھ ہی اس نمائش کا آغاز سینٹر کے عظیم ہال میں اعلیٰ حکام، اسلامی فن و تاریخ کے محققین، دانشوروں اور دنیا کے مختلف ممالک کے مہمانوں کی موجودگی میں کیا گیا۔

یہ نمائش 9 ماہ تک سعودی عرب کے شہروں جدہ، مدینہ منورہ اور ریاض میں منعقد کی جائے گی۔ اس کے بعد اس نمائش کا انعقاد دنیا کے بعض دوسرے شہروں میں بھی کیا جائےگا۔

اس نمائش کے انعقاد کا مقصد اسلامی تاریخ کے اہم ترین واقعات میں سے ایک یعنی پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وسلم کی 622ء میں ھجرت مدینہ پر روشنی ڈالنا ہے۔ اس ھجرت سے ایک ایسے معاشرے کی بنا پڑی جو آج ڈیڑھ ارب مسلمانوں کی شکل میں دنیا کے چپے چپے پر موجود ہے۔

عالمی نمائش

کنگ عبدالعزیز سینٹر فار ورلڈ کلچر (اثرا) کے ڈائریکٹر عبداللہ الراشد نے کہا کہ"پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے نقش قدم پر ہجرت کی نمائش نہ صرف ایک نمائش ہے بلکہ یہ اپنی نوعیت کا ایک منفرد تحقیقی پروگرام ہے جس کے ذریعے انتہائی احتیاط کے ساتھ مقامی اور بین الاقوامی ماہرین کے ذریعے ھجرت کے14 مراحل کو ڈیزائن کیا گیا۔ ان انٹرایکٹو اسٹیشن، ایک دستاویزی فلم اور ایک کتاب کی شکل میں ھجرت کی کہانی بیان کی گئی ہے۔ اس نمائش کی تیاری کے لیے 70 سے زیادہ مقامی اور بین الاقوامی ماہرین نے حصہ لیا۔

نوادرات اور مخطوطات

الراشد نے نشاندہی کی کہ اس نمائش میں فن پاروں کی نمائش کی جائے گی،جس کے ذریعے اسلامی تہذیب کے قدیم دور کی عکاسی کی کوشش کی گئی ہے۔

نمائش کی تیاری میں مقامی اور بین الاقوامی اداروں، ریاض میں موجود نیشنل میوزیم، شاہ عبدالعزیز وقف لائبریری کمپلیکس، جدہ کے دارالفنون میوزیم اور جبل التراکواز کی طرف سے تعاون کیا گیا۔ ان اداروں کی طرف سے ھجرت نبوی کی نمائش کے لیے اثرا کے ساتھ تعاون کے معاہدے کیے گئے۔

ھجرت کی نمائش کی تیاری کے لیے سعودی عرب کے مایہ ناز محقق ڈاکٹر عبداللہ القاضی کی تحقیقی کاوشوں سے مدد لی گئی جنہوں نے ھجرت کی تمام سابقہ روایات روایتی ادبی لٹریچر اور فیلڈ ریسرچ کے ذریعے جمع کیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں