.

اسکارف کی وجہ سے ایرانی خاتون سے جبری اعترافات پرعوام میں شدید غصہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جب سے ایران میں اصلاح پسندوں اور بنیاد پرستوں یا اعتدال پسندوں اور سخت گیروں کی تفریق ختم ہوئی ہے ایران میں انتظامی اور قانون ساز ادارے مکمل طور پر انتہا پسندوں کے ہاتھ میں آ گئے ہیں، جنہوں نے طاقت کے ذریعے اپنے نظریات اور مذہب کو معاشرے پر مسلط کرنا شروع کر دیا ہے۔

اس سلسلے میں ایرانی ریڈیو اینڈ ٹیلی ویژن کارپوریشن کی خبر رساں ایجنسی کی جانب سے ایرانی کارکن "سپیدہ رشنو" کے جبری اعترافات کی ویڈیو نشر کیے جانے پر سماجی پلیٹ فارمز کے سرگرم کارکنوں میں شدید ردعمل سامنے آیا ہے۔

ایک فنکار، ناول نگارلکھاری سپیدہ راشنو کو حکام نے 15 جون کو نقاب پوش خاتون کے ساتھ احتجاج کرنے پر گرفتار کیا تھا جس نے اسے بس میں حجاب پہننے کے طریقے کے بارے میں خبردار کیا تھا اور اس نے اس کی ریکارڈ کی گئی میں ویڈیو سپاہ پاسداران انقلاب کے حوالے کرنے کی دھمکی دی تھی۔

یہ احتجاج صرف سماجی رابطوں کی ویب سائٹس کے عام شہریوں تک محدود نہیں تھا بلکہ اس میں ادیبوں، فنکاروں اور ماہرین تعلیم بھی شامل ہیں۔تہران یونیورسٹی کے اکیڈمک فیکلٹی کے رُکن محسن برہانی کا کہنا تھا کہ ریڈیو اور ڈائریکٹرز کے اس فیصلے سے ٹیلی ویژن اتھارٹی کے پروگرام "زبردستی اعتراف" میں سپیدہ راشنو کی تصویر نشر کرنے پر "قانونی سزا" شامل ہونی چاہیے۔

معروف اہوازی عرب گلوکار مہدی یرحی نے سپیدہ راشنو کے ٹی وی اعترافی بیان کی نشریات پر تبصرہ کرتے ہوئے ٹویٹ کیا کہ "میں جمہوریہ ایران ٹی وی سے سخت بیزار ہوں اور میں کھلے عام اعلان کرتا ہوں کہ یہ عوام دشمن ادارہ ہے۔ کسی بھی حالت میں میرے کسی کام کو استعمال اور نشر کرنے کا کوئی حق نہیں ہے۔"

مقبول خبریں اہم خبریں