.

جہاد اسلامی کے راکٹ حملوں کے بعد اسرائیلیوں کی بڑے پیمانے پر نقل مکانی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جنوبی اور وسطی اسرائیل میں سائرن گونجنے کے بعد غزہ سے داغے گئے متعدد راکٹ ان علاقوں میں جا گرے، جس کے نتیجے میں اسرائیلی شہریوں کی بڑے پیمانے پر نقل مکانی دیکھنے میں آئی ہے۔

اخبار "ٹائمز آف اسرائیل" کے مطابق تصاویر میں غزہ سے راکٹ حملے کے بعد اسرائیلیوں کے بڑے پیمانے پر فرار اور پناہ گاہوں میں داخل ہوتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔ راکٹوں سے بچنے کے لیے بھگدڑ کے دوران 4 اسرائیلی زخمی ہوئے ہیں۔

جیسے ہی اندھیرا چھایا اسرائیلی حکام نے کہا کہ سائرن جنوبی اور مرکز کے علاقوں میں بج رہے ہیں، جبکہ بعض تصاویر میں اسرائیلی فضائی دفاعی نظام کے ذریعے فلسطینیوں کے راکٹ مار گرانے کے مناظر بھی دکھائے گئے ہیں۔

اسرائیل کے اقتصادی مرکز تل ابیب میں عینی شاہدین نے بتایا کہ انہوں نے دھماکوں کی آوازیں سنی ہیں، لیکن سائرن بجنے کی کوئی اطلاع نہیں ہے۔

العربیہ اور الحدث کے نامہ نگار نے اپنے مراسلوں میں بتایا ہے کہ وسطی اسرائیل میں خاص طور پر عسقلان میں سائرن کی آوازیں سنی گئیں، جبکہ ایمبولینس ٹیموں نے پناہ گاہیں کھولنے کے علاوہ اپنی تیاری کا اعلان کیا۔

العربیہ نامہ نگار کے مطابق اسرائیل نے کہا کہ غزہ سے راکٹوں سے کوئی جانی نقصان نہیں ہوا، جب کہ اسرائیل نے اندازہ لگایا ہے کہ غزہ میں کشیدگی دنوں تک جاری رہے گی۔

العربیہ/الحدث کے نمائندے نے یہ بھی اطلاع دی ہے کہ آئرن ڈوم نے غزہ سے داغے گئے 100 راکٹوں میں سے 40 کو مار گرایا۔

اسرائیلی فوج نے انکشاف کیا تھا کہ اس نے جمعہ کو غزہ پر کیے گئے فضائی حملوں میں 15 افراد کی ہلاکت کیا ہے۔ اسلامی جہاد کا کہنا ہے کہ غزہ کی پٹی میں اسلامی جہاد کے خلاف جاری آپریشن ابھی ختم نہیں ہوا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں