مغربی کنارے کو بھی اسرائیل کے خلاف مسلح کیا جا رہا ہے: ایرانی پاسداران انقلاب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

تہران اور تل ابیب کے درمیان مشرق وسطیٰ میں اثر و رسوخ کے دائرہ کار میں وسعت کی جدوجہد کے جلو میں ایرانی پاسداران انقلاب کے کمانڈر انچیف حسین سلامی نے اعلان کیا ہےکہ مغربی کنارے کے عوام کو بھی اسرائیلیوں کے خلاف مسلح کیا جا رہا ہے۔

حسین سلامی کا یہ بیان گذشتہ روز شائع ہونے والے ایرانی سپریم لیڈر علی خامنہ ای کے دفتر کی ویب سائٹ کو دیے گئے ایک انٹرویو میں سامنے آیا ہے، جس میں انہوں نے کہا تھا کہ ''غزہ مزاحمت اور جدوجہد کا واحد میدان نہیں ہے، بلکہ اس جدوجہد نے بھی غزہ کی آزادی کی کوشش کی ہے جسے اب فلسطین کے مغربی کنارے منتقل کر دیا گیا ہے‘‘۔

انہوں نے دھمکی آمیز انداز میں مزید کہا کہ ’’اسرائیل اور اس کے قابض باشندوں کے لیےکوئی جائے پناہ نہیں ہوگی ‘‘۔ حزب اللہ کے راکٹوں کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ فلسطینی فورسز کی فائر پاور ان کی جانب بڑھ گئی ہے۔ انوں نے مزید کہا کہ اسرائیل کے دیگر تمام شہر راکٹوں کے نشانے پر ہیں۔

اگرچہ مشرق وسطیٰ میں حکومتی اور آزاد سیاسی جماعتیں تہران پر الزام عائد کرتی ہیں کہ وہ اسرائیل کے ساتھ اثر و رسوخ کے دائروں کی جدوجہد میں فلسطینی کاز کو اپنے مفادات کے لیے استعمال کرنے کی کوشش کر رہا ہے، تہران کا کہنا ہے کہ وہ فلسطینی قوم کے نصب العین کی حمایت کرتا ہے۔ وہ فلسطین میں اسرائیل کے خلاف برسر پیکار قوتوں کو "مزاحمتی محاذ" قرار دیتا ہے۔

ایرانی پاسداران انقلاب کے کمانڈر انچیف نے اسرائیل کے "اعلی ٹیکنالوجی اور سکیورٹی غلبے" کو تسلیم کیا، لیکن انہوں نے مزید کہا اس کے باوجود فلسطینی مغربی کنارے کو مسلح کرنے میں کامیاب ہو گئے ہیں جو کہ غزہ کی پٹی سے ایک مکمل طور پر الگ علاقہ ہے۔

سلامی یہ کہہ کر بالواسطہ طور پر یہ بتانے کی کوشش کرتے ہیں کہ اس کے پیچھے ان کا ملک ہےجس طرح غزہ کو مسلح کیا گیا تھا، اسی طرح مغربی کنارے کو بھی مسلح کیا جا سکتا ہے اور یہ عمل ہو گا۔ تاہم انہوں نے اس میں ایران کے ملوث ہونے کے امکان کو واضح نہیں کیا لیکن انہوں نے ایرانی حکومت کو فلسطینیوں کے "سچے دوستوں" میں سے ایک قرار دیا جو مشکل حالات میں آخر تک فلسطینیوں کے ساتھ کھڑے ہیں۔

قابل ذکر ہے کہ اسرائیل نے 2011 سے شام کی سرزمین پر موجود ایرانی افواج کو وقتاً فوقتاً دردناک حملے کرنے کی ہدایت کی ہے لیکن ایران نے شامی سرزمین سے اسرائیلی حملوں کا کوئی جواب نہیں دیا اور شام میں اپنی مداخلت کے بعد سے حزب اللہ کو کسی بھی قسم کی کارروائیوں سے روکا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں