واشنگٹن نے جوہری معاہدے میں خود کو ناکام بنادیا: نیتن یاہو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

اسرائیل کے سابق وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے ایران کے جوہری معاہدے پرشدید تنقید کی ہے۔

بدھ کے روز ’العربیہ‘ کو دیے گئے ایک انٹرویو میں نیتن یاہو نے کہا کہ امریکی انتظامیہ اس جوہری معاہدے سے خود کو ناکام کر چکی ہے۔

انہوں نے کہا کہ "ایک دہائی کے اندر، تہران کے پاس دہشت گردی کی مالی معاونت کے لیے ایک ارب ڈالر ہوں گے۔ ایرانی حکام کسی بھی معاہدے کی پاسداری نہیں کریں گے، چاہے وہ اچھا ہی کیوں نہ ہو‘۔

انہوں نے اس بات پر بھی زور دیا کہ ایران کے ساتھ موجودہ جوہری معاہدہ ہر ایک کو منفی طور پر متاثر کرتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایرانی حکومت سب کو دھمکیاں دیتی ہے۔ ان کا ملک اسے جوہری ہتھیار رکھنے کی اجازت نہیں دے گا۔

ایک دہائی کے اندر تہران کے پاس دہشت گردی کی مالی معاونت کے لیے ایک ارب ڈالر ہوں گے۔

جہاں تک امریکی مؤقف کا تعلق ہے، اس کا خیال ہےکہ واشنگٹن نے خود کو ناکام کیا ہے اور نہ صرف اسرائیل کو تہران کے ساتھ بالواسطہ طور پر مذاکرات کرکے ناکام کیا ہے تاکہ قلیل مدتی فوائد کے حصول کے لیے خراب جوہری معاہدے کو بحال کیا جا سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں